ہمارے پاس الفاظ نہیں جن سے آپ کی تعریف کی جائے:چیف جسٹس

ہمارے پاس الفاظ نہیں جن سے آپ کی تعریف کی جائے:چیف جسٹس


لاہور( 24نیوز ) سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں نجی یونیورسٹی سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد نے چیف جسٹس پاکستان سے مکالمہ کیا ہے کہ آپ کے ریمارکس پر اپوزیشن استعفے کا مطالبہ کر رہی ہے،جس پر چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے ریمارکس دئیے کہ آپ کو استعفیٰ نہیں دینے دیں گے،گھبرانے کی ضرورت نہیں ہمارے خلاف بھی مہم چلتی ہے،واٹس ایپ میسج موجود ہیں،کیاان حالات میں کام کرنا چھوڑ دیں؟۔

تفصیل کے مطابق نجی یونیورسٹی کے کیس میں صوبائی وزیرصحت ڈاکٹریاسیمین راشد عدالت میں پیش ہوئیں،ڈاکٹریاسمین راشدنے چیف جسٹس کی سربراہی میں 2رکنی بنچ کے روبرو پیش ہوکر اپنا مدعا بیان کیا،اس وقت چیف جسٹس اور صوبائی وزیر کے درمیان دلچسپ مکالمہ بھی ہوا۔

ڈاکٹر یاسمین راشد نے شکوہ کیا کہ آپ کے ریمارکس پراپوزیشن مجھ سے استعفے کامطالبہ کررہی ہے،چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ آپ کواستعفیٰ نہیں دینے دیں گے آپ اپناکام کریں،گھبرانے کی کوئی ضرورت نہیں آپ بہت قابل احترام ہیں ،آپ کاپوراکیرئیر بے داغ ہے،ہمارے خلاف بھی مہم چلائی جاتی ہیں ایسے وٹس ایپ میسج موجودہیں ،کیا ان حالات میں کام کرناچھوڑدیں ،کس نے آپ کےخلاف یہ مہم شروع کی ،ہمارے پاس الفاظ نہیں جن سے آپ کی تعریف کی جائے۔