مردہ بچوں کی پیدائش میں اضافہ کیوں ہو رہا ہے؟حاملہ خواتین یہ خبر ضرور پڑھیں

مردہ بچوں کی پیدائش میں اضافہ کیوں ہو رہا ہے؟حاملہ خواتین یہ خبر ضرور پڑھیں


 حیدرآباد ( 24 نیوز ) سول اسپتال حیدرآباد میں رواں سال مردہ پیدا ہونے والے بچوں کی تعداد تین سو سے زائد ہوگئی، ماؤں کو شوگر، بلڈ پریشر اور غذا کی کمی کی وجہ سے پیدا ہونے والے مردہ بچوں کی تعداد بڑھ رہی ہے۔

اے ایم ایس سول اسپتال حیدرآباد  ڈاکٹر نعیم ضیاء کے مطابق جو حاملہ خواتین تسلسل کے ساتھ اپنا چیک اپ نہیں کرواتیں اور صحت مند غذا استعمال نہیں کرتی ہیں،  وہ زیادہ متاثر ہوتی ہیں جبکہ ٹینشن، بلڈ پریشر اور شوگر کا توازن برقرار نہ ہونا بھی حاملہ خواتین پر اثر انداز ہوتا ہے،   سول اسپتال میں رواں سال مردہ پیدا ہونے والے بچوں کی تعداد تین سو سے تجاوز کرگئی ہے۔

 محتاط اندازے کے مطابق سول اسپتال حیدرآباد میں روازانہ ایک سے دو بچے مردہ پیدا ہورہے ہیں،  جو خواتین بے جان بچوں کو جنم دے رہی ہیں ان کی اکثریت کا تعلق دیہی علاقوں سے ہے،  جہاں صحت مرکز کی کمی اور شعور کا فقدان ہے۔دورانِ حمل سب سے زیادہ خواتین کو جو مسئلہ درپیش آتا ہے وہ خون کی کمی کا مسئلہ ہوتا ہے، جس کے باعث خواتین کمزوری کا شکار ہوتی ہیں اور یہی کمزوری آگے جاکر بچے کی نشونما کو بھی متاثر کرتی ہے، اس کی بنیادی وجہ اچھی خوراک کا نہ لینا ہے یا خوراک میں آئرن کی کمی کا ہونا ہے۔

خواتین کو متوازن غذا کی سب سے زیادہ ضرورت دورانِ حمل ہی ہوتی ہے۔ حاملہ خواتین کی غذا میں گوشت ،انڈے،پھل ،مچھلی وغیرہ شامل ہونی چاہیے، ہرے پتوں والی سبزیاں ،اور پھل ضرور لیں اس کے علاوہ دودھ، دہی، لسی کا استعمال بھی بڑھا دیں۔

Malik Sultan Awan

Content Writer