سندھ میں غیر معیاری کھانوں کی فروخت کرنیوالوں کو کھلی چھٹی

سندھ میں غیر معیاری کھانوں کی فروخت کرنیوالوں کو کھلی چھٹی


کراچی(24نیوز) سندھ میں غیرمعیاری کھانوں پرنظررکھنے والاادارہ سندھ فوڈاتھارٹی کسی کام کا ہی نہ نکلا۔ اتھارٹی کوبنے ایک سال سے زائد کاعرصہ ہوگیا۔ ادارے کے پاس عملہ ہے نہ وسائل، اتھارٹی کسی ریسٹورنٹ کیخلاف فی الحال کارروائی کرہی نہیں سکتی۔

سندھ حکومت نے پنجاب فوڈ اتھارٹی کی طرز پر اپریل 2017 میں سندھ حکومت نے سندھ فوڈ اتھارٹی تو قائم کردی لیکن ایک سال سے زائد عرصہ گزرنے کے بعد بھی فوڈ اتھارٹی مکمل فعل نہ ہوسکی،سندھ فوڈ اتھارٹی میں مستقل فوڈ سیفٹی آفیسرز،انسپیکٹرز بھرتی نہ کئے جاسکے، یہی نہیں بلکہ اب تک فوڈ اتھارٹی کی اپنی لیب بھی نہیں،سونے پہ سہاگہ یہ کہ فوڈ اتھارٹی نے آج تک لائنسنسنگ کا عمل ہی شروع نہیں کیا جبکہ قانون کے مطابق صوبے میں قائم تمام ریسٹورنٹس کو سندھ فوڈ اتھارٹی کا لائنسنس حاصل کرنا ضروری ہے۔

دوسری جانب سندھ فوڈ اتھارٹی کے ہونے والے اجلاس میں ڈی جی فوڈ اتھارٹی اور 'ڈائریکٹر نے شرکت کی، وزیر خوراک ہری رام کشوری کو بتایا گیا کہ فوڈ اتھارٹی کا قیام تو عمل میں لایا گیا ہے لیکن عملہ نہ ہونے کے سبب ادارہ کوئی کام سرانجام نہیں دے پارہا ہے۔ 

ضرور پڑھیں:انکشاف 16 جون 2019

قانون کے مطابق فوڈ اتھارٹی کا دائرہ کار صوبے بھر پر محیط ہے مگر مطلوبہ عملہ نہ ہونے کے باعث ریسٹورنٹس کے خلاف کارروائی فی الحال ممکن نہیں ہے۔

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔