سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے قوم سے معافی کیوں مانگی؟

 سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے قوم سے معافی کیوں مانگی؟


اسلام آباد ( 24نیوز )ایل این جی کیس میں احتساب عدالت نے شاہد خاقان عباسی، مفتاح اسماعیل اور سابق ایم ڈی پی ایس او عمران الحق کے جسمانی ریمانڈ میں 26 ستمبرتک توسیع کردی۔

تفصیلات کے مطابق ایل این جی ٹرمینل کیس میں نیب نے سابق وزیراعظم شاہد خاقان، مفتاح اسماعیل اورسابق ایم ڈی پی ایس او عمران الحق کو احتساب عدالت پیش کیا،نیب کےتفتیشی افسرنے شاہد خاقان عباسی کے مزید 14 روزہ جسمانی ریمانڈ کی استدعا کرتے ہوئے کہا کہ کیس میں مزید تحقیقات کرنی ہیں جس پر عدالت نےچودہ روز کا جسمانی ریمانڈ دیا۔

سابق وزیراعظم کاکہنا تھا کہ بات ساری وہی ہے جو چیف جسٹس نے کہی، چیئرمین نیب کی تقرری پرقوم سے معافی مانگ لی،شاہد خاقان عباسی روسٹرم پرآئے اورکہا کہ یہ سارے کیس سیاسی ہیں,خدشہ ہے کہ ان پرجعلی کیس بنا دیاجائے گا،انہوں نے ایک بار پھر 90 روزکا ریمانڈ دینے کی درخواست کر دی .

عدالت نے تینوں ملزمان کے جسمانی ریمانڈ میں 26 ستمبر تک توسیع کردی, صحافیوں سے گفتگو  کرتے ہوئےشاہد خاقان عباسی نے ڈیل کی خبروں کی تردید اور پروڈکشن آرڈرجاری نہ کرنے پراسپیکر پربھی تنقید کی۔

اس سے پہلے کمرہ عدالت میں میڈیا سے غیررسمی گفتگو میں سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ نیب کا ادارہ ہی غلط ہے,یہ ن لیگ کو توڑنے کے لیے بنایا گیا تھا۔

انہوں نے نوازشریف کے این آر او لینے کی تردید کر تے ہوئے کہا کہ نوازشریف کوئی ڈیل کررہے ہیں نہ انہیں ڈیل کیلئے کوئی خط لکھا۔