سیاست دانوں پر جوتا اچھالے جانے کی 10 سالہ داستان

سیاست دانوں پر جوتا اچھالے جانے کی 10 سالہ داستان


24 نیوز: سیاست دانوں پر جوتا اچھالنے کا ایشو اپنے عروج کو پہنچ چکا ہے۔ کیونکہ رواں ہفتہ میں پاکستان کی دونوں سب سے بڑی جماعتوں کے بانیوں پر جوتا اچھالا گیا۔

اتوار کے دن جامعہ اشرفیہ لاہور میں سابق وزیر اعظم میاں نواز شریف پر جوتا اچھالا گیا جبکہ منگل کے روز گجرات میں عمران پر جوتا اچھالنے کی خبریں خوب وائرل ہوئیں۔

عمران خان پر صرف ایک دن میں دوبار جوتے سے حملہ کیا گیا۔ جوتا اچھالنے والے نے نشانہ کپتان کو بنایا لیکن وہ جوتا علیم خان کے سینہ پر جا لگا۔

یہ روایت آج کی نہیں ہے۔ گزشتہ ایک دہائی سے سیاستدانوں کو جوتوں کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔سب سے پہلے 7 اپریل 2008  کو سابق وزیراعلیٰ سندھ ارباب غلام رحیم کو سندھ اسمبلی سے باہر آتے ہوئے ایک شخص نے جوتا مار دیا تھا۔

14 دسمبر 2008 کو عراق میں ایک صحافی نے اس وقت کے امریکی صدر جارج بش پر 2 جوتے پھینک دیئے تھے۔

7 اپریل 2009 کو بھارتی ہوم منسٹر چدم برم پر ایک سکھ صحافی کی جانب سے جوتا اچھال دیا گیا۔

26اپریل 2009 کو اس وقت کے بھارتی وزیراعظم ممنوہن سنگھ پر احمد آباد ریلی میں جوتا اچھالا گیا تھا۔

29 مارچ 2013 کو سندھ ہائی کورٹ سے باہر آتے ہوئے سابق صدر پرویز مشرف کو ایک شخص نے جوتا مار دیا تھا۔

10 اپریل 2014 کو امریکہ میں ایک تقریب کے دوران خاتون نے ہلیری کلنٹن پر جوتا اچھال دیا تھا۔

5 جنوری 2015 کو بھارتی ریاست بہار کے وزیراعلیٰ کو پٹنا میں جوتا پڑا۔

11جنوری 2017 کو بھارتی پنجاب کے چیف منسٹر پرکاش سنگھ بادل پر جوتا پھینکا گیا تھا۔

4 مارچ 2017 کو شیخ رشید کو لاہور ریلوے اسٹیشن پر ایک پریس کانفرنس کے بعد جوتا مار دیا گیا تھا۔

24فروری 2018 کو وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال پر نارووال میں ورکرز کنونشن کے دوران جوتا اچھال دیا گیا تھا۔

ضرور پڑھئے: تبدیلی کے دعوے دار تبدیلی لے آئے، اپنے ہی رکن اسمبلی بلدیوکمارپر جوتے برسادیئے

 27 فروری 2018 کو خیبر پختونخوا اسمبلی میں پاکستان تحریک انصاف کے ممبر صوبائی اسمبلی ارباب جہانداد خان نے حلف لینے آئے بلدیو کمار کو جوتا مار دیا تھا۔

پڑھنا نہ بھولئے:نواز شریف پر جوتا پھینک دیا

11 مارچ 2018 کو سابق وزیراعظم نوازشریف پر جامعہ اشرفیہ لاہور میں جوتا اچھالا گیا تھا۔

یہ بھی پڑھئے: پاکستان کی جمہوریت جوتوں کی زد میں آگئی، عمران خان پر دوسرا وار

13 مارچ 2018 کو گجرات میں عمران خان پر دو بار جوتا اچھالا گیا۔ عمران خان بچ گئے اور جوتا عبدالعلیم خان کو جا لگا۔