پلاسٹک کی تھیلیوں کا متبادل؟

پلاسٹک کی تھیلیوں کا متبادل؟


اسلام آباد(24نیوز) پلاسٹک بلاشبہ ہماری زندگیوں میں انتہائی اہمیت کا حامل ہے۔ ہمارے روز مرّہ استعمال کی کئی چیزیں اس کی مدد سے بنائی جاتی ہیں۔ مگر جہاں یہی پلاسٹک ہماری زندگیاں آسان بناتا ہے، تو وہیں اس سے ماحول بھی آلودگی کا شکار ہوتا ہے۔ لیکن پولیتھین بیگ بین ہونے کے بعد اور اس کے متبادل کے لیے حکومت نے کیا اقدامات کیے ہیں۔

سستے اور کارآمد ہونے کی وجہ سے پلاسٹک کے یہ تھیلے ہماری زندگی کا ایک لازمی حصہ بن گئے ہیں۔ سودا سلف خریدنا ہو تو یہ شاپر بیگ دودھ، دہی اور سبزی لانی ہو تو بھی یہی پلاسٹک بیگ اور تو اور کوڑا پھینکنے کے لیے بھی ان تھیلوں سے بہتر کچھ نہیں۔ لیکن حکومت کی طرف سے یہ پلاسٹک بیگ بند ہونے کے بعد ان کا کوئی مناسب ردوبدل پیش نہیں کیا گیا ہے۔

پاکستان پلاسٹک مینوفیکچررز ایسوسی ایشن کے مطابق 55 ارب پلاسٹک کے تھیلے استعمال ہوتے ہیں۔ انتظامیہ نے متبادل انتظام کیے بغیر ہی یہ تھیلے بند کردیے ہیں جن سے دکاندار اور گاہک سب مشکل میں پڑ گئے ہیں۔

پلاسٹک بیگ بنانے والی نئی فیکٹریاں بنانے پر پابندی عائد کی جا تو رہی ہے لیکن عوام پریشان ہے کہ ان کو حکومت کی طرف سے کوئی مناسب ردوبدل کا انتظام نہیں کیا گیا ہے۔

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔