شمالی کوریا امریکہ کو دباؤ میں لانے کیلئے نیا ’’ہتھیار‘‘ میدان میں لے آیا


پیانگ یانگ(24نیوز) شمالی کوریا کے رہنما کم جونگ ان کو دنیا کو اپنی جانب متوجہ کرنے کے لیے میزائل چلانے کی ضرورت نہیں ہے،ان کے اسلحہ خانے میں کئی دوسرے ہتھیار ہیں،یہ ہتھیار ان کی مشینیں نہیں ہیں بلکہ یہ ان کی خواتین سفیر ہیں جن کا کسی میزائل ہی کی طرح ذکر ہوتا ہے۔
تفصیلات کے مطابق ان خواتین میں سب سے زیادہ سرخیوں میں رہنے والی ان کی بہن کم یو جونگ ہیں، کم یو جونگ نے جنوبی کوریا کے ناظرین کو اپنی طرف متوجہ کیا اور ان کے ذہن و دل پر چھا گئیں،جب انھوں نے اپنے بھائی کے پیغام کے ساتھ جنوبی کوریا کے ایوان صدر میں قدم رکھا تو ٹی وی پر ان کے ہر انداز کو دکھایا گیا،کم یو جونگ کے زرق برق لباس، ان کی زلفیں اور ان کے انداز کی امریکہ میں بھی گونج سنی گئی اور ٹی وی چینلوں پر پابندی کے باوجود وہ موضوع بحث رہیں،وہ پراسرار ملک کے انسانی چہرے کے طور پر سامنے آئیں۔
پیانگ یانگ میں خبررساں ایجنسی کے سابق بیورو چیف ژاں لی کہتے ہیں کہ جنوبی کوریا کے لوگوں کے لیے یہ ایک غیر معمولی واقعہ تھا،انھوں نے خوبصورت ترین خاتون کو یہاں بھیجا۔ جب آپ شمالی کوریا جائیں گے ہیں، تو ایسی خوبصورت خواتین آپ کو لبھائیں گی،ن کا یہی کام ہے کہ وہ لوگوں کو احساس دلائیں کہ ان کا ملک اور وہاں کے لوگ اتنے برے نہیں ہیں، شمالی کوریا کا امیج بدلنے کا کام کچھ دن قبل شروع ہوا جب خواتین کا ایک گروپ جنوبی کوریا کے دارالحکومت سیول پہنچا، شمالی کوریا کے چیئر لیڈرز کو کہا جاتا ہے کہ وہ اپنے ملک کا وقار بڑھانے کے لیے وہاں ہیں،بہر حال ایسا محسوس ہوتا ہے کہ شمالی کوریا کی لبھانے کی قوت کی اپنی حدیں ہیں۔

اظہر تھراج

صحافی اور کالم نگار ہیں،مختلف اخبارات ،ٹی وی چینلز میں کام کا وسیع تجربہ رکھتے ہیں