موبائل فون بچوں کیلئے خطرناک ہے، امریکی تحقیق

موبائل فون بچوں کیلئے خطرناک ہے، امریکی تحقیق


(ویب ڈیسک) آج کل بچوں میں موبائل فون کا استعمال عام ہوچکا ہے۔ بچے مختلف قسم کی گیمز، کارٹون دیکھنا پسند کرتے ہیں، دوسری طرف ماں باپ اپنے بچوں کو ویڈیوز کے ذریعے مختلف قسم کی ابتدائی تعلیم دینے کیلئے بچوں کے ہاتھوں میں موبائل تھما دیتے ہیں۔ بلاشبہ اس سے بچوں کو بنیادی تعلیم سے آگاہ تو ہوجاتے ہیں لیکن اس سے ان کی صحت پر بہت بُرا اثر پڑ رہا ہوتا ہے۔

امریکا کے نیشنل انسٹیٹیوٹ آف ہیلتھ نے ساڑھے 4 ہزار بچوں کے دماغ کا اسکین کیاجس کے بعد ماہرین نے بچوں پر موبائل فون کے استعمال کو خطرناک قرار دیا۔ تحقیق کے مطابق 9 اور 10 سال کے بچے جو 7 گھنٹوں سے زیادہ وقت موبائل فون استعمال کرتے ہیں، ان کے دماغ کی بیرونی جھلی جو کہ معلومات کو پراسس کرنے کا کام کرتی ہے وہ کمزور ہوجاتی ہے۔ تحقیق کے مطابق وہ بچے جو 1 سے 2 گھنٹے موبائل فون کا استعمال کرتے ہیں ان میں سوچنے سمجھنے کی صلاحیت متاثر ہوتی ہے۔

 ٹچ اسکرین کا زیادہ استعمال نہ صرف بچوں بلکہ بڑوں کو بھی نقصان پہنچاتا ہے۔ موبائل کی سکرین نیلے رنگ کی ہوتی ہے، یہ رنگ باقی تمام رنگوں سے زیادہ توانائی کا حامل ہوتا ہے۔ یہ نہ صرف بچوں بلکہ بڑوں کی نظر کو دھنلا بلکہ نابینا بھی کر سکتا ہے۔ اس کے علاوہ گردن، کمر اور سر درد کا باعث بنتا ہے۔ دماغی کارکردگی کم ہوتی ہے جبکہ نیند پر بھی منفی اثر پڑتا ہے۔

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔