ممبئی حملہ متنازع بیان، "قومی سلامتی کونسل کمیٹی" کا اعلامیہ جاری


اسلام آباد(24نیوز) ممبئی حملوں سے متعلق سابق وزیراعظم نواز شریف کے ڈان اخبار کو دیے گئے بیانات پر وزیراعظم ہاؤس میں قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس ختم ہوگیا ہے ۔ قومی سلامتی کمیٹی نے ممبئی حملوں سے متعلق سابق وزیراعظم نواز شریف کے حالیہ متنازع بیان کو مکمل طور پر غلط اور گمراہ کن قرار دیتے ہوئے تمام الزامات کو متفقہ طور پر رد کردیا۔

قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی زیرصدارت ہوا جس میں آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ، وفاقی وزرا سمیت بحری اور فضائی افواج کے سربراہان شامل ہوئے۔

یہ بھی پڑھیں: نواز شریف کی ڈھٹائی، ملک مخالف بیان پر ڈٹ گئے

وزیراعظم کی زیرصدارت قومی سلامتی کمیٹی نے ممبئی حملے سے متعلق نوازشریف کے بیان کومتفقہ طور پر مسترد کردیا، قومی سلامتی کمیٹی نے الزامات کو یکسر مسترد کرتے ہوئے بیان کی مذمت کی۔ اجلاس کے بعد جاری بیان میں ممبئی حملے سے متعلق نواز شریف کے بیان کو غلط اور گمراہ کن قرار دیا گیا، بیان میں کہاگیا ہےکہ بیان غلط فہمی کی بنیاد پردیاگیا یا حقائق کو غلط انداز میں پیش کیاگیا۔
اعلامیہ میں کہاگیا ہے کہ ممبئی حملہ کیس تحقیقات میں تاخیر پاکستان کی وجہ سے نہیں بلکہ بھارت کی وجہ سے ہوئی ،بھارت نے اجمل قصاب تک پاکستان کو رسائی نہیں دی، اور اسے عجلت میں پھانسی دی گئی ۔اعلامیہ میں کہا گیا کہ پاکستان کلبھوشن جاویو اور سانحہ سمجھوتہ ایکسپریس کیلئے بھی بھارتی تعاون کا خواہاں ہے.

یاد رہے کہ وزیر اعظم نے آرمی کی تجویز پر قومی سلامتی کا اجلاس طلب کیا  تھا۔پاک فوج کے ڈائریکٹر جنرل میجر جنرل آصف غفور کی جانب سے ٹوئٹر پر ٹویٹ کیا گیا کہ اجلاس کا مقصد ممبئی حملوں سے متعلق میڈیا پر چلنے والے گمراہ کن بیانات پر تبادلہ خیال کرنا ہے۔

 

وقار نیازی

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔