وزیر داخلہ احسن اقبال ہسپتال سے ڈسچارج، دعاؤں کیلئے عوام کا شکریہ ادا کیا


لاہور (24 نیوز) وفاقی وزیرداخلہ کو صحت یابی کے بعد سروسز ہسپتال سے ڈسچارج کردیا گیا۔ احسن اقبال نے ہسپتال سے ڈسچارج ہونے کے بعد اپنی والدہ کی قبر پرحاضر دی اور خصوصی طیارے سے اسلام آباد روانہ ہو گئے۔

 24 نیوز ذرائع کے مطابق وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال گذشتہ آٹھ روز سے ہسپتال میں زیر علاج تھے۔ ماہر ڈاکٹرز پر مشتمل پانچ رکنی ٹیم نے احسن اقبال کو صحتیاب ہونے کے بعد ڈسچارج کرنے کا فیصلہ کیا۔

احسن اقبال کو ماہرڈاکٹر کی ٹیم نے چھ ہفتے آرام کا مشورہ دیا۔ وفاقی وزیر داخلہ کے بیٹے احمد اقبال نے بتایا کہ ڈاکٹرز نے والد کو سیاسی سرگرمیاں محدود کرنے کے ساتھ گھر پر آرام کا مشورہ دیا ہے۔ انھوں نے مثبت رپورٹنگ کرنے پر صحافیوں کا شکریہ بھی ادا کیا۔

یہ خبر بھی پڑھیں:34 لاکھ کا خرچہ، چیف جسٹس پاکستان نے پی آئی اے پر مارخور کی تصویر لگانے سے روک دیا

وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال نے صحتیاب ہونے کے بعد اپنے کمرے سے باہر آکر سیکورٹی اہلکاروں سے ہاتھ بھی ملایا۔  احسن اقبال کو سخت سیکورٹی حصار میں سروسز ہسپتال سے روانہ کیا گیا۔

وزیر داخلہ احسن اقبال کا سروسز سپتال سے ڈسچارج ہونے کے بعد ویڈیو پیغام میں  کہنا تھا کہ  اللہ تعالی کا شکر ادا کرتا ہوں جس نے مجھے نئی زندگی دی، پاکستان کی عوام کا بھی شکریا ادا کرنا چاہتا ہوں جنہوں نے میرے لیے دعائیں کی اور دنیا بھر سے اور عالمی رہنمائوں نے یکجہتی اور نیک تمنائوں کے پیغام بھیجے ان کا بھی شکریا ادا کرنا چاہتا ہوں۔

 پڑھنا مت بھولئے: پوری ن لیگ، شہباز شریف اور میں نواز شریف کے ساتھ کھڑے ہیں: وزیر اعظم

انہوں نے مز ید کہا کہ سابق وزیراعظم نواز شریف، وزیراعظم شاہد خاقان عباسی اور بلاول بھٹو زرداری سمیت عیادت کے لئے آنے والی سیاسی شخصیات کا بھی شکریہ ادا کرتا ہوں۔ انکا کہنا تھا  کہ حملہ کے وقت موجود سکیورٹی اہلکاروں کا بھی شکریہ ادا کروں گا ، جنہوں نے جان پر کھیل کر ملزم کو گرفتار کیا۔

وزیر داخلہ نے نارووال کے ڈاکٹرز کا بھی شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ  مجھے ابتدائی طبی امداد دی، میں نے طبی سہولیات کے لئے پبلک سیکٹر اسپتال کا چناؤ کا شکریہ، سروسز اسپتال کے ڈاکٹرز اور بیٹی نرسز کا بھی شکریہ ادا کرتا ہوں جنہوں نے میری بہت زیادہ دیکھ بھال کی، ان ضحافی حضرت کا بھی شکرگزار ہوں جو ہر وقت وہاں موجود رہے اور قوم کو باخبر رکھا ۔