پی ٹی آئی حکومت بھی ن لیگ کے نقش قدم پر چل نکلی

پی ٹی آئی حکومت بھی ن لیگ کے نقش قدم پر چل نکلی


اسلام آباد( 24نیوز ) وزیراعظم عمران خان ذمہ دار یا پوری حکومت؟ پی ٹی آئی حکومت بھی ن لیگی سابقہ حکومت کے نقش قدم پر چلنے لگی،وزارت خزانہ نے نیب کے ایک ارب 10 کروڑ دبالئے،نیب ذرائع کہتے ہیں کہ ایساوزیراعظم،وزرا اوراہم سرکاری عہدوں پرتعینات افسروں کیخلاف انکوائریوں کی وجہ سے ہورہا ہے۔

وزیراعظم اور ان کے قریبی ساتھیوں کےخلاف انکوائریوں پر نیب کوخمیازہ بھگتنا پڑگیا،حکومت نے نیب کے1ارب 10کروڑروپے روک لیے۔

قومی احتساب بیورو کو ریکوری اینڈ ریوارڈ اور ہارڈشپ الاﺅنس فنڈز کے لئے وزیر اعظم عمران خان نے چیئرمین نیب کو مکمل تعاون کی یقین دہانی کروائی تھی لیکن اسوقت نیب کو شدید مایوسی کا سامنا کرنا پڑا جب وزارت خزانہ نے ایک ارب 20 کروڑ روپے کے فنڈز کی منظوری کے لئے بھجوائی گئی سمری مسترد کردی۔

نیب ذرائع کا کہنا ہے کہ فنڈز روکے جانے کی وجہ کئی حکومتی اعلیٰ شخصیات کے خلاف کرپشن اور بدعنوانی کی انکوائریز اور تحقیقات ہیں جو ابھی حتمی مراحل میں ہیں۔

نیب ذرائع کا کہنا ہے کہ ماضی کی حکومت نے بھی نیب فنڈز میں کمی کے ساتھ اسے روکا تھا۔جس میں سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار اور شاہد خاقان عباسی سرفہرست ہیں۔دوسری جانب فنڈز کی عدم دستیابی سے نیب میں کام کرنے والے چھوٹے ملازمین مشکلات کا شکار ہیں۔چئیرمین نیب نے اپنی جیب سے دو ملازمین کی بچوں کی شادی کے لئے ایک لاکھ روپے ادا کئے۔

دوسری طرف وفاقی وزیر علی زیدی نے اپنا اقامہ کینسل کرانے کا اعلان کرنے ہوئے کہا ہے نیب کو فنڈز دئیے جائینگے،منظوری کیلئے وزیر اعظم کو سمری ارسال کردی ہے،نیب کے فنڈز جلد ریلیز کردیئے جائینگے جبکہ چیئرمین نیب نے کہا ہے کہ ایمانداری کانچ کی گڑیا نہیں،وزیر اعظم سے نیب کے فنڈز ریلیز کروانے کیلئے ملا ،ملاقات نہ کرتا تو ملازمین کی تنخواہوں پر اثر پڑتا۔