10 سالہ بچہ تعلیم کے ساتھ ساتھ شکر قندی بیچنے پر مجبور

10 سالہ بچہ تعلیم کے ساتھ ساتھ شکر قندی بیچنے پر مجبور


قمبر(24 نیوز)   10 سالہ اشفاق علی چانڈیو غربت کی وجہ سے روزانہ نجی سکول میں تعلیم حاصل کرنے کے بعد اپنے گھر کا چولہا چلانے کے لئے شہر میں شکرکندی بیچنے پر مجبور ہے۔

تفصیلات کے مطابق قمبر  شہر کےغوشالا محلے کا باسی 10 سالہ بچہ اشفاق علی چانڈیو ،  گزشتہ ایک سال سے اپنے گھر کا چولہا چلانے  اور اپنی تعلیم کو جاری رکھنے کے لئے صبح کے وقت  نجی سکول میں تعلیم حاصل کرنے کے لئے جاتا ہے ، جس کے بعد اپنے گھر والوں کے گزربسرکرنے کیلئے  شکرکندی بیچتا ہے۔

اس معصوم بچے کا کہنا ہے کہ میرے بابا درزی کی دکان پر کام کرتے  ہیں ، جو روزانہ  بامشکل 3 سے 4 سو روپے کما تے ہیں۔  جس سے ہمارےگھر کا گزر بسر نہیں ہو رہا ہے ،اسی لیے میں شکرکندی بیچ کر روانہ 2 سو 3 سو کما کر اپنی فیس بھی دیتا ہوں اور گھر کا خرچہ بھی چلانے میں مدد دیتا ہوں۔ ملک میں مہنگائی ہونے کی وجہ سے بابا کی آمدنی سے گھر کا چولہا نہیں چل رہا جس کی وجہ سے میں بھی روزگار کر رہا ہوں۔