ریاست تعلیمی شعبہ میں ذمہ داری پوری نہیں کر رہی ،سپریم کورٹ

ریاست تعلیمی شعبہ میں ذمہ داری پوری نہیں کر رہی ،سپریم کورٹ


اسلام آباد(24 نیوز) چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے قراردیا ہےکہ ریاست تعلیم کے شعبہ میں اپنی ذمہ داری پوری نہیں کر رہی۔ ریاست کی ناکامی پر ہی لوگ نجی اسکولز جاتے ہیں۔ 

 چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نےنجی اسکولوں کی فیسوں میں اضافے سے متعلق کیس کی سماعت کی۔ چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے استفسار کیا کہ کیا عدالت قطر ایئرلائینز کو اتحاد ائیر لائنز جتنے اخراجات لینے کا پابند کرسکتی ہے؟ والدین بچوں کی تعلیم کیلئے اپنی مرضی سے نجی سکولوں کا انتخاب کر سکتے ہیں۔

والدین کے وکیل فیصل صدیقی نے موقف اختیار کیا کہ نجی اسکول ہرتین ماہ بعد اسکول کی فیس میں اضافہ کرلیتے ہیں۔ ہر سال ایڈمیشن کی مد میں بھاری رقم بھی وصول کرتے ہیں۔  چیف جسٹس نے ریمارکس دئیے کہ مفت تعلیم کی فراہمی ریاست کی ذمہ داری ہے۔

چیف جسٹس نے قرار دیا کہ ریاست کی ناکامی پر ہی لوگ نجی اسکولز جاتے ہیں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیے کہ ریاست کا کام ہے نجی اسکولز کو ریگولیٹ کرے۔  جسٹس فیصل عرب بولے کہ نجی اسکولز میں بھی کم اور زیادہ فیس کے آپشنز ہوتے ہیں۔عدالت نے سماعت کل تک ملتوی کردی۔