ضمنی انتخابات حکمران جماعت پر بھاری پڑ گئے

ضمنی انتخابات حکمران جماعت پر بھاری پڑ گئے


اسلام آباد(24نیوز) ضمنی انتخابات کےمعرکےنےحکمران جماعت کی گرتی مقبولیت کاپردہ فاش کردیا۔ 25جولائی کی معرکےمیں جیتی ہوئی9نشستوں سےپی ٹی آئی کوصرف ڈھائی ماہ بعدہی ہاتھ دھونے پڑگئے۔

 14اکتوبرکےضمنی الیکشن میں پی ٹی آئی سےمجموعی طورپر9نشستیں چھن گئیں۔عام انتخابات میں جیتی ہوئی قومی اسمبلی کی 3نشستوں جبکہ 6صوبائی حلقوں سےحکمران جماعت کوہاتھ دھونےپڑگئے۔

عام انتخابات میں این اے35بنوں اوراین اے131 لاہورسےچیئرمین عمران خان منتخب ہوئےلیکن 14اکتوبرکےمعرکےمیں ایم ایم اےکےزاہداکرم درانی نےبنوں کی نشست پی ٹی آئی سے چھین لی۔ادھرلاہورمیں میں بھی جنرل الیکشن میں پی ٹی آئی چیئرمین سےہارنےوالے خواجہ سعدرفیق نےپی ٹی آئی امیدوارہمایوں اخترخان کومات دےدی۔این اے56اٹک کی نشست بھی مسلم لیگ ن کےسہیل خان لے اڑے۔ 25جولائی کےمعرکےمیں یہ سیٹ پی ٹی آئی نےجیتی تھی۔

یہی نہیں صوبائی حلقوں میں بھی حکمران جماعت کوکئی نشتیں مخالفین کودینی پڑگئیں۔ ن لیگ کے افتخاراحمد خان نےاکبرخان کوہراکرپی ٹی آئی کو پی پی 3اٹک کی نشست سے محروم کردیا جبکہ پی پی 27جہلم سےپی ٹی آئی اپنے وزیر اطلاعات فواد چوہدری کی چھوڑی ہوئی صوبائی نشست بھی دوبارہ حاصل کرنے میں ناکام رہی۔لیگی امیدوارناصرمحمودنےضمنی الیکشن کامعرکہ مارلیا۔آزادامیدوارقاسم عباس خان نےپی ٹی آئی کوملتان کی نشست پی پی222سےمحروم کردیا جبکہ تحریک انصاف کی ڈیرہ غازی خان کی نشست پی پی 292بھی ن لیگ کےاویس لغاری لےاڑے۔

ادھرخیبرپختونخوامیں بھی پاکستان تحریک انصاف نے2صوبائی نشستوں پراپنی مقبولیت کھودی۔پی کے3سوات کی نشست لیگی امیدوارسردارخان جیت گئے جبکہ سوات ہی کےحلقہ پی کے7سےاےاین پی کےوقاراحمدنےپی ٹی آئی کوایک اورنشست سےمحروم کردیا۔

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔