پی آئی اے عملے کا جھگڑا، مسافر رل گئے


لاہور ( 24 نیوز ) پی آئی اے کی  لاہور سے لندن جانے والی پرواز،   جہاز کے کپتان اور فلائیٹ اسٹیورڈ میں جھگڑے کے باعث روانگی  کیلئے تین گھنٹے تاخیر کا شکار ہو گئی۔

تفصیلات کے مطابق ہفتہ کی صبح لاہور سے لندن جانے والی پی آئی اے کی پرواز پی کے757 اس وقت تاخیر کا شکار ہو گئی ، جب جہاز کے کپتان نے فلائیٹ اسٹیورڈ اویس قریشی کو لاہور سے لندن اپنے ہمراہ لے جانے سے انکار کر دیا ۔واقع کے بعد دونوں میں تکرار شروع ہو گئی ، انتطامیہ نے معاملہ حل کرانے کی کافی کوشش کی لیکن کپتان بضد رہا کہ اویس قریشی لندن فلائیٹ پر نہیں جائے گا ۔

 معاملے کو سلجھانے کےلیے انتظامیہ کو تین گھنٹے سے زائد کا وقت لگ گیا لیکن معاملہ اسی وقت حل ہوا جب انتظامیہ نے اویس قریشی کو کپتان کے اعتراض پر جہاز سےآف لوڈ کر دیا ۔کپتان کےمطابق اویس قریشی ماضی میں موبائل اسمگلنگ جیسےواقعات میں ملوث رہ چکا ہےلہذا وہ ایسے بدنام زمانہ فلائیٹ اسٹیورڈ کے ہمراہ لاہور سے لندن روانہ نہیں ہو سکتا ۔

دوسری جانب قومی ایئرلائن کے فضائی میزبانوں کی تنطیم نے واقعے پر اپنا رد عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ اویس قریشی پر لگے الزامات میں سے کوئی ایک بھی ثابت نہیں ہو سکا جس کے بعد اسے پھر سےپروازوں کی اجازت مل گئی ، کپتان کی جانب سےجس رویے کا اظہار کیا گیا ہے وہ سراسر نا انصافی ہے ۔

  لاہور ایئرپورٹ پر پیش آنے والے اس واقعے پر تاحال پی آئی اے انتطامیہ کی جانب سےکوئی موقف سامنے نہیں آیا ، ادھر متاثرہ پرواز کے مسافروں کا کہنا تھا کہ تین گھنٹے تک انہیں جس تکلیف کا سامنا کرنا پڑا ہے اس کا ازالہ کون کرے گا ؟ انتظامیہ کو بار بار کہا کہ معاملہ جلدی حل کریں لیکن پھر بھی پرواز کی روانگی میں تین گھنٹے سے زائد کا وقت لگ گیا جس سے ان کے معمولات بری طرح متاثر ہوئےہیں۔