مقبوضہ کشمیر میں مسلمان بچی سے زیادتی و قتل کیخلاف آواز اٹھانے پر کرینہ کو کڑی تنقید کا سامنا


ممبئی (24نیوز) مقبوضہ کشمیر میں 8 سالہ مسلمان بچی سے اجتماعی زیادتی اور بہیمانہ قتل پر بالی وڈ کے ستارے آواز اٹھا رہے ہیں۔ کرینہ کپور نے آواز اٹھائی تو انھیں مسلمان سے شادی کا طعنہ دیا جانے لگا۔

مقبوضہ کشمیر میں 8 سالہ آصفہ بانو کے ساتھ ہونے والے ظلم کے خلاف آواز بلند کرنے پر بالی وڈ اسٹارز تنقید کا نشانہ بن رہے ہیں۔ حال ہی میں کرینہ کپور خان کی ایک تصویر سوشل میڈیا پر وائرل ہوئی، جس میں وہ مقتولہ آصفہ کی حمایت میں ایک پلے کارڈ اٹھائے نظر آئی تھیں۔

کرینہ کپور کی اس تصویر پر ایک ٹوئٹر صارف ہرش وردھن نے لکھا کہ آپ کو اس بات پر شرم آنی چاہیے کہ ہندو ہونے کے باوجود ایک مسلمان سے شادی کی اور اپنے بیٹے کا نام تیمور رکھا جو ایک جابر مسلم بادشاہ کا نام ہے۔

فلم 'ویرے دی ویڈنگ' میں کرینہ کی ساتھی اداکارہ سوارا بھاسکر نے جواب میں لکھا کہ کرینہ کے بجائے آپ کو اس دنیا میں اپنی موجودگی پر شرم آنی چاہیے، خدا نے آپ کو دماغ دیا تھا، جسے آپ نے نفرت سے بھر دیا۔

ویرے دی ویڈنگ کو بہت پسند کیا گیا جو چھوٹے بجٹ کی اچھی فلم تھی۔

کرینہ کپور کے بیٹے کا نام تیمور رکھنے پر ہندوستان میں بحث شروع ہو گئی تھی۔ کرینہ کپور نے سیف علی خان سے شادی کی جو بے حد تنقید کا شکار ہوئی۔

واضح رہے کہ آصفہ بانو کے ساتھ ہونے والی زیادتی اور اس کے بہیمانہ قتل پر بالی وُڈ ستاروں نے آواز بلند کی اور پلے کارڈ اٹھا کر سوشل میڈیا پر احتجاج کیا۔ جن میں سونم کپور بھی شامل تھیں۔

ویرے دی ویڈنگ میں کرینہ کی ساتھ اداکارہ سوارا نے بھی یہ احتجاج کیا۔