مسلم لیگ ن میں فارورڈ بلاک بن گیا


لاہور( 24نیوز )چودھری پرویز الٰہی بھاری اکثریت سے پنجاب اسمبلی کے سپیکر منتخب ہوگئے ہیں،انہوں نے201ووٹ حاصل کیے ہیں،ن لیگ کے امیدوار چودھری اقبال گجر نے147ووٹ حاصل کیے ہیں۔چودھری پرویز الٰہی نے اپنے عہدے کا حلف اٹھا لیا ہے،ان سے حلف سپیکر پنجاب اسمبلی رانا محمد اقبال نے لیا جو اب عہدہ چھوڑ چکے ہیں۔
دوسری جانب 24نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے ق لیگ کے رہنما کامل علی آغا نے کہا ہے کہ ن لیگ میں فارورڈ بلاک بن چکا ہے،ن لیگی ارکان نے پرویز الٰہی کو ووٹ دیکر اچھا فیصلہ کیا ہے،ن لیگ والوں نے ماضی میں ہمارے بھی 42ارکان کا فارورڈ بلاک بنایا تھا-
                                                                                                                                                    اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر کا انتخاب

عام انتخابات کے بعد وفاقی اور صوبائی حکومتوں کے تشکیل کیلئے اسمبلیوں کے اجلاس جاری ہیں،ملک کے سب سے بڑے صوبے پنجاب میں دو بڑی جماعتوں میں کانٹے کا مقابلہ ہے ،پنجاب اسمبلی کے نو منتخب ارکان آج نئے اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر کا انتخاب خفیہ رائے شماری کے ذریعے کریں گے، اس مقصد کے لیے ایوان کو پولنگ اسٹیشن قرار دیا گیا ہے۔
اسپیکر پنجاب اسمبلی کے عہدے کیلئے پاکستان تحریک انصاف اور ان کے اتحادیوں کی جانب سے چوہدری پرویز الٰہی اور مسلم لیگ (ن) کی جانب سے چوہدری محمد اقبال امیدوار ہیں جبکہ ڈپٹی اسپیکر کے لیے تحریک انصاف کے سردار دوست محمد مزاری اور (ن) لیگ کے محمد وارث شاد کے درمیان مقابلہ ہوگا۔
مسلم لیگ (ن) نے الیکشن بھرپور طریقے سے لڑنے کے لیے حکمت عملی طے کرلی ہے،دوسری جانب پیپلز پارٹی نے الیکشن سے لاتعلق رہنے اور کسی کو ووٹ نہ دینے کا فیصلہ کیا ہے۔

یہ بھی لازمی پڑھیں۔۔۔  پنجاب کے متوقع وزیر اعلیٰ کا نام سامنے آگیا
پنجاب اسمبلی کا ایوان 371 ارکان پر مشتمل ہے، عام انتخابات 2018ءمیں 360 ارکان منتخب ہو کر ایوان میں پہنچے ہیں، گزشتہ روز 354 اراکین اسمبلی نے حلف اٹھایا، 6 اراکین اسمبلی حلف اٹھانے کے لیے نہ پہنچ سکے، جبکہ 11 نشستیں تاحال خالی ہیں۔
پنجاب اسمبلی کے ریکارڈ کے مطابق 72خواتین منتخب ہوکر ایوان میں آئی ہیں، جن میں 5 جنرل نشستوں پر، 66 مخصوص نشستوں پر جبکہ ایک کا انتخاب اقلیتی نشست پر ہوا ہ، 360 ارکان میں سے 175 کا تعلق پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) سے اور 162 کا مسلم لیگ (ن) سے ہے، مسلم لیگ (ق) کے ارکان 10 جبکہ پیپلز پارٹی کی 7 نشستیں ہیں۔