" ہم این آراونہیں مانگیں گے"



اسلام آباد( 24نیوز ) خواجہ آصف نے کہا ایک جج چلاگیا، نوازشریف آج بھی قیدہے اس پرکوئی کرپشن کاالزام ثابت نہیں ہوا،ہم این آراونہیں مانگیں گے،آج خواجہ آصف ایوان میں ہے اورمشرف فرارہے۔

خواجہ آصف نے قومی اسمبلی اجلاس میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ آئی ایم ایف کے نمائندے یہاں لاکر بٹھا دیئے گئے، نان الیکٹڈ لوگوں سے الیکٹڈ لوگوں کی توہین کرائی جارہی ہے، ایک روز وزیر مملکت کو وفاقی وزیر بنایا دوسرے دن نان الیکٹڈ کے دباؤپر واپس کردیا گیا، رانا ثنااللہ پر الزام کہ بیس کلو ہیروئن اس نے پیچھے مڑ کر اٹھاکر دی یہ ویسا ہی کیس ہے جیسا چوہدری ظہور الہیٰ پر بھینس چوری کا مقدمہ بنا،ہم این آراونہیں مانگیں گے،ہم یہ جنگ عزت اوروقار کےساتھ لڑیں گے،ہم نےمشرف دورمیں بھی جیلیں کاٹیں۔

خواجہ آصف کا کہناتھا کہ میرے والد نے ایک تقریر میں کہا تھا جب تک میڈیا آزاد ہے جمہوریت کو کوئی نقصان نہیں پہنچا سکتا میڈیا ہمارا بھی احتساب کرتا ہے آپ کا بھی احتساب کرتا ہے، اگر صحافت محفوظ نہ ہوئی تو جمہوریت غیر محفوظ ہو گی، ایک جج کی ویڈیو آئی معاملہ عدالت میں ہے فیصلے کی کوئی حثییت نہیں رہی مگر نوازشریف آج بھی جیل میں ہے، اس پرکوئی کرپشن کاالزام ثابت نہیں ہوا، نوازشریف کانام ہمیشہ زندہ رہے گا۔

ان کا کہناتھا کہ ہمیں عدالتوں سے انصاف ملے گا، سعدرفیق سمیت سب جو قید ہوں گے قید کاٹ لیں گے، اٹک قلعے میں میری آنکھوں پر پٹی باندھ کر ہتھکڑی لگوانے والا پرویزمشرف کہاں ہے؟آج خواجہ آصف ایوان میں ہے اورمشرف فرارہے،سیاسی کارکنوں کی آج جو تحقیر کی جا رہی ہے اس کی سیاسی تاریخ میں مثال نہیں ملتی۔

خواجہ آصف نے قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے مزید کہا کہ ایک سال میں تین بجٹ پیش کئے گئے، عوام پر بجٹ کے اثرات کو ہٹانے کے لئے اپوزیشن پر کرپشن کے الزامات لگائے جا رہے ہیں، بجٹ کے اثرات عوام پر آنا شروع ہو گئے ہیں،اگلے چند ماہ میں مہنگائی ملک کا سب سے بڑا مسئلہ بن جائی گی۔

ملک میں مہنگائی بڑھتی جا رہی ہے کسی حکومتی رکن نے مہنگائی اور ٹیکسز کی بھرمار پر بات نہیں کی۔