سکولوں کی کی فیسوں کا تعین عدالت کریگی: چیف جسٹس

سکولوں کی کی فیسوں کا تعین عدالت کریگی: چیف جسٹس


اسلام آباد(24نیوز) چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار کا کہنا ہے کہ نجی اسکولوں کی فیس کا تعین عدالت کرے گی،  پرائیوٹ اسکول کے مالکان تعلیم بیچ رہے ہیں,  ان کے ٹیکس ریٹرن دیکھیں گے۔  چیف جسٹس نے نجی اسکول مالکان کو آڈٹ اکاونٹس جمع کرانے کی بھی ہدایت کردی ۔

 چیف جسٹس کی سربراہی میں تین رکن بنچ نے نجی سکولوں کی فیسوں سے متعلق کیس کی سماعت کی. دوران سماعت چیف جسٹس نے اسکول مالکان سے کہا کہ آپ اپنی مرضی کی فیس چارج کر رہے ہیں اور کہتے ہیں آپ کا رائٹ ٹو ٹریڈ ہے،  آپ تعلیم بیچ رہے ہیں،نجی اسکولوں کے وکیل شہزادالٰہی کے مسکرانے پر چیف جسٹس نے کہا یہ مسکرانے کی بات نہیں، آپ کہتے ہیں من مانی فیس لیں گے جسے منظور نہیں اپنے بچے کو لے جائے۔
وکیل صفائی نےکہا فیس کتنی بڑھائی جائے یہ معاملہ عدالت کے سامنے ہے،  چیف جسٹس نے کہا فیسوں کے بڑھانے کا اگر کوئی ضابطہ نہیں تو ہم خود فیسوں کا تعین کر دیتے ہیں۔ چیف جسٹس کے ریمارکس پر والدین نے تالیاں بجائیں جس پرچیف جسٹس نےانہیں سختی سے منع کرتے ہو کہا کہ یہ عدالت کی تعظیم کےخلاف ہے۔

استاد کی اہمیت سے متعلق چیف جسٹس نے کہا نپولین نے جب میلان فتح کیا تو کہا تھا جسے معافی لینی ہو وہ کسی استاد کے گھر چلا جائے. اشفاق احمد جرمنی کی عدالت گئے تو عدالت ان کے احترام میں کھڑی ہوگئی۔ میں چاہتا ہوں سب کی ایک کتاب اور ایک سلیبس ہو لیکن ایسا نہیں کر سکا۔ سپریم کورٹ نے تعلیمی پالیسی، فیسوں کے تعین اور ریگولیٹری باڈی کے لیے کمیٹی تشکیل دیدی ۔  دوسری جانب سندھ حکومت نے تمام اسکولوں کو چھٹیوں کے دوران لی گئی اضافی فیس واپس کرنے کا حکم جاری کردیا۔ اس حوالے سے سرکلر کی کاپی سپریم کورٹ میں جمع کرادی گئی ہے ۔

وقار نیازی

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔