اسما قتل کیس: ملزم نبی کے بیان، پولیس کے مؤقف میں کھلا تضاد

اسما قتل کیس: ملزم نبی کے بیان، پولیس کے مؤقف میں کھلا تضاد


مردان (24 نیوز) اسما قتل کیس میں نیا موڑ آ گیا۔ ملزم نبی کے بیان نے پولیس کی کارکردگی پر سوالات اٹھا دیئے۔ ملزم نے اپنے اعترافی بیان میں بچی سے زیادتی کا اعتراف کر لیا جبکہ پولیس کا مؤقف ہے کہ بچی سے زیادتی کی صرف کوشش ہوئی ہے۔

تفصیلات کے مطابق مردان میں قتل ہونے والی بچی اسما کے کیس میں نیا موڑ آیا ہے جس کے بعد خیبر پختونخوا پولیس کی کارکردگی پر سوالیہ نشان ثبت ہو گیا ہے۔

ملزم نے اپنے اعترافی بیان میں ہے کہ بچی کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنانے کے بعد قتل کیا جبکہ پولیس کی جانب سے مرتب کی گئی رپورٹ کے مطابق بچی کے ساتھ جنسی زیادتی کی کوشش کی گئی ہے ہوئی نہیں ہے۔

یہ بھی پڑھئے: معصوم زینب کو انصاف مل گیا،درندے عمران کو 4بارسزائے موت کا حکم
 
ملزم نبی کے بیان اور پولیس کے مؤقف میں کھلا تضاد دیکھنے میں آ رہا ہے۔ ملزم کے اعترافی بیان کے مطابق جنسی زیادتی کے بعد بچی شور کر رہی تھی۔ گلہ دبا کر مار دیا۔ بچی لوگوں کو نہ بتائے اس لیے اسے مارڈالا۔ گنے کے بہانہ بچی کو گنے کے کھیت لے کر گیا۔

اعترافی بیان میں ملزم نے واضح کیا کہ میرے منع کرنے کے باوجود بچی شور کررہی تھی۔