تاریخ کے امیر ترین شخص ’’موسیٰ منسا‘‘ مسلمان تھے

تاریخ کے امیر ترین شخص ’’موسیٰ منسا‘‘ مسلمان تھے


ویب ڈیسک(24نیوز) معروف میگزین ’منی‘ نے موسیٰ منسا کو تاریخ کا امیر ترین شخص قرار دیا ہے، ان کا تعارف یہ ہے کہ وہ ٹمبکٹو کے فرمانروا تھے۔ انہوں نے مالی کی سلطنت پر اس دور میں حکومت کی جب وہ معدنیات اور بطور خاص سونے کے ذخیرے سے مالا مال تھا۔

تفصیلات کے مطابق معروف میگزین ’منی‘ نے موسیٰ منسا کو تاریخ کا امیر ترین شخص قرار دیا، یہی وہ وقت تھا جب پوری دنیا میں سونے کی مانگ اپنے عروج پر تھی،  ان کا اصل نام موسیٰ کیٹا اول تھا لیکن تخت نشین ہونے کے بعد وہ منسا کہلائے جس کا مطلب بادشاہ ہے.مغربی افریقہ کے لیے حال ہی میں شروع ہونے والی بی بی سی پِجن سروس کے مطابق موسیٰ کی سلطنت کی حد کسی کو معلوم نہیں تھی، آج کے موریطانیہ، سینیگال، گیمبیا، گنی، برکینا فاسو، مالی، نائیجر، چاڈ اور نائجیریا وغیرہ کا علاقہ اس وقت موسیٰ کی سلطنت کا حصہ ہوا کرتا تھا۔

منسا موسیٰ نے کئی مساجد کی تعمیر کرائی جن میں سے بعض ابھی تک موجود ہیں۔منسا موسیٰ کی دولت کا آج کے دور میں تخمینہ لگانا مشکل ہے،  پھر بھی ایک اندازے کے مطابق ان کی دولت چار سو ارب امریکی ڈالر کے برابر تھی، امیزون کے بانی جیف بیزوس کو حال ہی میں دنیا کا امیر ترین شخص قرار دیا گیا ہے  جن کی دولت کا تخمینہ 106 ارب امریکی ڈالر لگایا گیا ہے، جبکہ منسا موسیٰ کے پاس جیف بیزوس سے کہیں زیادہ دولت تھی۔

موسیٰ منسا   کی سلطنت کا نقشہ: