فن یا بے حیائی؟امریکی فنکارکومنفرد فوٹو شوٹ کی اجازت

فن یا بے حیائی؟امریکی فنکارکومنفرد فوٹو شوٹ کی اجازت


ویب ڈیسک:مغربی ممالک کی نام نہاد جدیدیت اور اس کے پوری دنیا میں پھیلاﺅ کیلئے کیے جانیوالے ان کے اقدامات سے تو ایک آدمی بخوبی واقف ہے لیکن اب آسٹریلیا کی سپر مارکیٹ کی چھت پر ایک ایسے فوٹو شوٹ کی تیاری کی جارہی ہے جسے کوئی مہذب معاشرہ پسند نہیں کرے گا بلکہ اس پرسخت ردعمل آنے کا خدشہ ہے۔

آسٹریلیا کی سپر مارکیٹ چین ولورتھز نے اپنے فیصلے پر نظر ثانی کرتے ہوئے امریکی فنکار سپنسر ٹیونک کو میلبرن کے اپنے ایک سٹور کی کار پارکنگ کی چھت پر اجتماعی برہنہ تصویر کھینچنے کی اجازت دے دی ہے،اپریل میں ولورتھز نے پرہرن لوکیشن پر مسٹر ٹیونک کی برہنہ تصویر کھینچنے کی درخواست کو یہ کہتے ہوئے مسترد کر دیا تھا کہ  بہت زیادہ انتشار کا باعث ہو سکتا ہے،اس کے بعد اس کے لیے ایک آن لائن پیٹیشن لانچ کی گئی،اب ولورتھز کا کہنا ہے کہ وہ کار پارکنگ کی چھت کو پیر کی صبح ایک گھنٹے کے لیے استعمال کر سکتے ہیں کیونکہ اختتام ہفتہ پر خریداروں کی بھیڑ ہوتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:    دبنگ خان اور چاکلیٹی ہیرو میں”جنگ“چھڑ گئی

یہ فوٹو شوٹ آسٹریلوی صوبے وکٹوریہ کے دارالحکومت میلبرن میں ہونے والے چیپل سٹریٹ پرووکیئر آرٹس فیسٹیول کا حصہ ہے،یہ فوٹو شوٹ 9جولائی کو ہو گا اور اس کے لیے اب تک تقریباً 11 ہزار افراد نے برہنہ ہونے کے لیے خود کو رجسٹر کروایا ہے، اتنے زیادہ لوگ تو کار پارکنگ کی چھت پر بھی نہیں آ سکتے۔

جب اس فوٹو شوٹ کے لیے مسٹر ٹیونک نے درخواست دی تھی تو انھوں نے کہا تھا کہ اس میں تقریباً 500 افراد شامل ہوں گے،مسٹر لوٹن نے کہا کہ وہ اس میں شامل ہونے والے افراد سے سرکاری ٹرانسپورٹ کے استعمال کی گزارش کریں گے کیونکہ وہاں انھیں محدود پارکنگ دستیاب ہے۔