5سال پہلے کیوں کسی کواحتساب یاد نہیں آیا: احسن اقبال


 لاہور(24نیوز) وفاقی وزیرداخلہ احسن اقبال نے کہا کہ انتخابات سےقبل احتساب شروع کردیا جاتا ہے، 5سال پہلے کیوں کسی کواحتساب یاد نہیں آتا۔

لاہور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے احسن اقبال کہا کہ پانچ سال سے سوئے ہوئے تھے، الیکشن سے پہلے احتساب نظر آتا ہے، احتساب کی بیماری اور اس کا نعرہ الیکشن سے پہلے ہی کیوں یاد آجاتا ہے، احتساب کو سیاسی نعرے کے طور پر استعمال کرنے کے خلاف ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ناکام قوتیں جانتی ہیں ن لیگ دو تہائی اکثریت سےجیتے گی۔

پڑھنا نہ بھولیں : ن لیگ اور نواز شریف کی بھلائی کس چیز میں ہے، چودھری نثار نے بتادیا 

پرویز مشرف سے متعلق انھوں نے کہا کہ اب جنرل پرویز مشرف نہیں بلکہ سیاسی جماعت کے سربراہ اور سیاستدان ہیں، وہ عام شہری ہیں اگر اس ملک کا سابق وزیر اعظم روزانہ کینسر میں مبتلا بیگم کو چھوڑ کر عدالت میں حاضریاں لگا سکتا ہے تو ایک صحت مند سابق جنرل کو قانون کے سامنے پیش ہونا چاہیے۔ وہ سکیورٹی سے نہ گھبرائیں، عدالت میں پیش ہوں گے تو ان کی عزت ہو گی اور قانون سے فرار ہوکر جرم ظاہر کرتا ہے۔ پرویز مشرف عدالت میں حاضر ہو جائیں ورنہ پاسپورٹ یا شناختی کارڈ معطل کر سکتے ہیں۔

متعلقہ خبر : سنگین غداری کیس، خصوصی عدالت کا پرویز مشرف کی انٹرپول کے ذریعہ گرفتاری کا حکم 

 نوازشریف کےلئےعوام میں عزت اورہمدردی بڑھ رہی ہے۔ پاکستان میں اتنے کھیل کھیلے گئے کہ لوگ ان پراعتبار کرنا بھول گئے ۔ بیس تیس سال پہلے کھیلے جانے والے کھیل اب ممکن نہیں ہیں۔5 سال پہلے کے پاکستان سے آج کا پاکستان مختلف ہے، ہم نے پانچ سال میں پاکستان کارخ بدل دیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: چیف جسٹس آف پاکستان نے سندھ حکومت کو ایک ہفتہ کا الٹی میٹم دے دیا 

احسن اقبال نے کہا کہ پانچ سال پہلے پاکستان کی معیشت جمود کا شکار تھی، پہلے پاکستان خطرناک ملک سمجھا جاتا تھا اب معاشی طور پر مضبوط ملک بن گیا ہے۔ ہم نے دہشت گردی کی کمرتوڑی ہے، 5سال پہلےکراچی میں بھتےکی پرچیاں ملتی تھیں اور اب پی ایس ایل کی ٹکٹیں مل رہی ہیں، پہلے پاکستان خطرناک ملک سمجھا جاتا تھا اب معاشی طور پر مضبوط ملک بن گیا ہے۔ 

 ضرور پڑھیں: عمران خان کان پکڑیں، توبہ کریں، کسی درگاہ پربیٹھ کر اللہ اللہ کریں، شہباز شریف کا مشورہ

وفاقی وزیر احسن اقبال نے کہا کہ جب مسلمان سائنس میں قیادت پر تھے تو دنیا ہم سے سائنس کے کلیے سیکھتی تھی۔قرآن ہمیں مشاہدہ کی تعلیم دیتا ہے اور مشاہدہ کے ذریعہ اللہ کو پہچاننے کی ترغیب دیتا ہے۔

 انھوں نے یہ بھی کہا کہ موجودہ حکومت کی پالیسیز کے تحت قائم ہونے والے پانچ سینٹر آف ایکسیلنس پاکستان کو چوتھے انڈسٹریل ریولوشن کی اکانومی کے لیے بنیاد فراہم کریں گے۔