سابق چیف جسٹس افتخار محمد چودھری بلٹ پروف گاڑی رکھنے کیلئے نہ اہل قرار

سابق چیف جسٹس افتخار محمد چودھری بلٹ پروف گاڑی رکھنے کیلئے نہ اہل قرار


اسلام آباد (24 نیوز) اسلام آباد ہائیکورٹ نے سابق چیف جسٹس آف پاکستان افتخار محمد چودھری کے زیراستعمال بلٹ پروف گاڑی کیس کا تفصیلی فیصلہ جاری کر دیا۔

سابق چیف جسٹس پاکستان افتخار محمد چودھری کے زیر استعمال بلٹ پروف گاڑی کیس کا تفصیلی فیصلہ میں کہا گیا ہے کہ افتخار محمد چودھری سمیت سپریم کورٹ کے متعدد ریٹائرڈ ججز قانون پر عمل نہیں کر رہے، عدالتی فیصلے میں انکشاف سامنے آیا ہے جس کے بعد ایک طرح سے بھونچال آ چکا ہے۔

یہ بھی پڑھئے: سنگین غداری کیس، خصوصی عدالت کا پرویز مشرف کی انٹرپول کے ذریعہ گرفتاری کا حکم 

فیصلہ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ ریٹائرڈ ججز صرف ججز پینشن آرڈر 1997 کے تحت مراعات حاصل کر سکتے ہیں۔ سابق چیف جسٹس پاکستان افتخار محمد چودھری قانون کے مطابق بلٹ پروف گاڑی رکھنے کے اہل نہیں۔

ریٹائرڈ جج ریٹائرمنٹ کے بعد صرف ایک ڈرائیور اور ایک گارڈ رکھ سکتا ہے۔ سابق چیف جسٹس افتخار چودھری کے پاس 9 کانسٹیبل، 2 سب انسپکٹرز، 1 ہیڈ کانسٹیبل اور دو ڈرائیورز ہیں۔

ضرور پڑھئے: نثار، شہباز ہم آواز، مائنس نواز کا نکتہ آغاز 

سپریم کورٹ کے دیگر ریٹائرڈ ججز بھی ریٹائرمنٹ کے بعد زائد مراعات لے رہے ہیں۔ وزیراعظم کو بھی اختیار نہیں کہ ججز پینشن آرڈر میں درج مراعات سے زیادہ فوائد دیں۔

جسٹس محسن اختر کیانی نے 31 صفحات پر مشتمل تفصیلی فیصلہ جاری کر دیا۔