"حکومت دعویٰ کرنےسےپہلےہوم ورک کر لے،ورنہ منہ کی کھانا پڑیگی"


کراچی(24نیوز) سٹی کورٹ کراچی میں پیشی کے موقع پرمیڈیاسے گفتگومیں ایم کیوایم کے رہنماء فاروق ستار نے کہاکہ ابھی تو شروعات ہے، حکومت سے ڈالر کی اُڑان قابو میں نہیں آ رہی،دعویٰ کرنے سے پہلے ہوم ورک کر لیں،ورنہ منہ کی کھانا پڑے گی۔

تفصیلات کے مطابق سٹی کورٹ کراچی میں پیشی کے موقع پرمیڈیاسے گفتگومیں ایم کیوایم کے رہنماء فاروق ستار کا کہنا تھا کہ عدالتوں میں پیشی کے حوالے سے سب سے بڑا میرا  ریکارڈ ہے،عدالتی نظام کہ بہتر بنانا ہوگا تفتیش کےعمل میں بہتری کی بھی گنجائش ہے،جو جماعت برسر اقتدار ہے اس کا نام ہی انصاف سے منسلک ہے، لیکن اپنی ناقص پالیسیوں کی وجہ سے آئے روز مسائل اور تنقید کا شکار ہورہی ہے،ان کا کہنا تھا کہ ایسا لگ رہا ہے پوری قوم کو مہنگائی کی دلدل میں ڈالنے کی کوشش ہو رہی ہے، غریب عوام کی کمر توڑ دی گئی ہے وہ زندہ رہنے کے قابل ہی نہیں رہا، آئی ایم ایف کی تیاری کر رہے ہیں۔

ایم کیو ایم رہنما کا کہنا تھا کہ گزشتہ روز سےڈالر کی اڑان قابو میں نہیں آرہی،گیس کے اور بجلی کے نرخ آسمان سے باتیں کرہے ہیں،  حکومت اپنی رہی سہی کسرپوری کررہی ہے،دو بڑی جماعتوں نے پہلے ہی مایوس کیا تیسری جماعت بھی مایوس کررہی ہے،کیا ایک ڈونکی کنگ ایک ملک چلائےگا؟کھوتا ملک کو اچھا چلا سکتا ہے،جتنے بڑے دعوی کیے گئے اتنا کچھ کیا نہیں، فاروق ستار کا کہنا تھا کہ لوگ اپنی عزتیں بیچ کر اپنا گزارہ کررہے ہیں، ابھی تو شروعات میں ایسا ہورہا ہے،جب آئی ایم ایف کا پرچہ تھمایا جائےگا تو کیا ہوگا؟آنے والے وقت میں جرائم میں اضافہ ہوگا۔

ان کامزید کہنا تھا کہ عمران خان سے ہاتھ جوڑ کر اپیل کرتا ہوں کوئی ایسا راستہ نکالیں کے ٹیکس چوروں سے ٹیکس لیں،وڈیروں اور جاگیرداروں سے ٹیکس وصول کرنا ہوگا،بلیک اکانومی کو آہستہ آہستہ میں اسٹریم میں لانا ہوگا، اگر آئی ایم ایف کے پاس جانا تھا تو عوام کو بتا دیں کے ہم نے غلط دعوے کیے تھے، گفتگو کے دوران صحافی نے ان سے سوال کیا کے کون ہیں بڑے چور نام بتادیں؟جس پر فاروق ستار کا کہنا تھا کہمجھے نام بتانے کیلئے ایف بی آر کے پاس بھیجنا پڑےگا۔

ان کا کہنا تھا کہ 39 لاکھ لوگوں کے نام آئے تھے جس کوٹیکس نیٹ میں شامل کیا جاسکتاتھا،اب تو جعلی اکاؤنٹس بھی نکل رہیے ہیں، حکومت سے گزارش ہے کہ دعویٰ کرنے سے پہلے ہوم ورک کریں ورنہ آپ کو منہ کی کھانا پڑیگی۔