العزیزیہ،فلیگ شپ ریفرنس،نواز شریف کے وکیل کا ایک اور انکار


اسلام آباد(24نیوز) العزیزیہ اورفلیگ شپ ریفرنس کی سماعت میں وکیل صفائی نے ہائیکورٹ کے فیصلے تک کارروائی کا حصہ نہ بننے کا کہہ دیا، جج محمد بشیرنے بتایاکہ ہائیکورٹ کو ریفرنس سے علیحدہ ہونے کا لکھ دیا ہے۔
احتساب عدالت میں العزیزیہ اسٹیل مل اورفلیگ شپ ریفرنسز کی سماعت ہوئی،جج محمد بشیرنے خواجہ حارث سے ریفرنس کسی دوسری عدالت منتقل کرنے سے متعلق استفسار کیا، خواجہ حارث نے کہا کہ آپ چاہیں تو ریفرنس سننے سے انکار کر سکتے ہیں،جج محمد بشیر نے بتایا کہ خط لکھ دیا، کیس منتقلی کا اختیار انکے پاس نہیں، خواجہ حارث نے کہا جب تک ہائیکورٹ کا فیصلہ نہیں آتا، کارروائی کا حصہ نہیں بنیں گے۔
نیب پراسیکیوٹرنے کہا سپریم کورٹ اورہائی کورٹ میں رٹ پٹیشن سے جڑے کیسیز وہی بینچ سنتا ہے، ساری شہادتیں یہاں رکارڈ ہوئیں تو ٹرائل بھی اسی جج کو مکمل کرنا ہوگا۔

 یہ بھی پڑھیں۔۔۔ الیکشن سے پہلے نوازشریف اورمریم نواز کی ضمانت ؟
العزیزیہ اورفلیگ شپ ریفرنس کے جیل ٹرائل کا نوٹیفکیشن احتساب عدالت میں پیش کیا گیا، عدالت نے وکیل صفائی سے رائے پوچھی، خواجہ حارث بولے تمام اسٹیک ہولڈرز کواعتماد میں لینے کی ضرورت تھی، جج محمد بشیر نے ریمارکس میں کہا جیل میں ٹرائل عدالت کیلئے بھی آسان نہیں، جیل میں سماعت کے انتظامات کرنا پڑیں گے،عدالت نے ریفرنسز پر سماعت 30 جولائی تک ملتوی کردی۔
واضح رہے نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث ایون فیلڈ ریفرنس کی سماعت کے دوران کیس علیحدہ ہوگئے تھے پھر کچھ دن بعد پیش ہوگئے تھے۔