نوازشریف کے اوپن ٹرائل کا فیصلہ


اسلام آباد( 24نیوز )نگران وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات بیرسٹر علی ظفر نے کہا ہے کہ نگران حکومت کسی گریٹ گیم کا حصہ نہیں،آئینی مینڈیٹ کے تحت کام کر رہے ہیں، نواز شریف کے فئیر ٹرائل کے لئے ہم نے اوپن ٹرائل کا فیصلہ کیا ہے، نواز شریف کی واپسی پر فیصلے ہم خود کر رہے تھے،مختلف نوٹیفیکیشنز کے اجرا کا علم نہیں۔
وفاقی کابینہ کے اجلاس کے بعد مختلف سیاسی جماعتوں کے سینیٹرز کے ہمراہ پریس بریفنگ میں نگران وزیر اطلاعات نے کہا کہ نواز شریف کے جیل ٹرائل کا فیصلہ ایک دفعہ کے لئے کیا تھا،آئین کے آرٹیکل دس اے کے مطابق شفاف ٹرائل ضروری ہے،آئندہ ٹرائل احتساب عدالت میں ہی ہو گا، جیل مینوئل کے مطابق نواز شریف سمیت تمام قیدیوں کو سہولیات دی جانی چاہئیں،سیکورٹی انتظامات جو بھی کرنے ہیں وہ کیے جائیں ۔

یہ بھی لازمی پڑھیں۔۔۔  ووٹرز کا موڈ تبدیل،بڑی تعداد میں پتنگیں کٹنے کا خدشہ
بیرسٹر علی ظفر نے کہا کہ فاٹا میں قانونی معاملات صوبائی حکومت دیکھے گی،وفاقی حکومت فاٹا میں فی الوقت نیا کوئی ٹیکس نہیں لگائے گی،بجلی پر بھی سیلز ٹیکس نہیں لیں گے، فاٹا میں پہلے سے قائم انڈسٹری پر بھی ٹیکس عائد نہیں ہو گا،نان کسٹم پیڈ گاڑیاں رجسٹر کرانے والوں سے بھی پانچ سال تک ٹیکس نہیں لگائیں گے۔
ان کا کہنا تھا کہ وفاقی کابینہ کو امن و امان کے معاملہ پر الگ بریفنگ دی جائے گی،ایف اے ٹی ایف کی تمام مطلوبہ ڈیمانڈز پوری کریں گے۔پریس بریفنگ کے دوران ہارون بلور میر سراج رئیسانی اور دہشت گردی کے شہداء کے لئے فاتحہ خوانی بھی کی گئی۔