پاکستان کا بی بی سی سے احتجاج

پاکستان کا بی بی سی سے احتجاج


اسلام آباد(24نیوز) بے بنیاد اور یکطرفہ خبروں پر پاکستان نے بی بی سی سے باضابطہ احتجاج کیا۔ وزارت اطلاعات کی جانب سے دو جون کی خبر پر ڈوزیئر بھی برطانوی ریگولیٹری ادارے آف کام کے حوالے کیا گیا، بی بی سے معذرت کے ساتھ خبر ویب سائٹ سے ہٹانے کا مطالبہ کیا۔

وزارت اطلاعات و نشریات کا احتجاجی ڈوزیئر 19 صفحات پر مشتمل ہے جو کہ پاکستان میں انسانی حقوق کی خفیہ خلاف ورزیوں سے متعلق خبر پر بھیجا ۔ڈوزیئر میں کہا گیاہے کہ 2 جون کوشائع ہونیوالی خبرصحافتی اقدارکیخلاف اورمن گھڑت تھی، خبرمیں فریقین کاموقف نہیں لیاگیاجوبی بی سی کی ادارتی پالیسی کیخلاف ہے۔ بغیرثبوت خبرشائع کرکے پاکستان کیخلاف سنگین الزام تراشی کی گئی، تجزیے سے واضح ہوتاہے خبرمیں جانبداری کامظاہرہ کیاگیا، 

خبرمیں حقائق کوبھی توڑمروڑکرپیش کیاگیا، خبرمیں حتمی نتائج کااخذکرناغیرجانبدار،معروضی صحافت کیخلاف ہے۔

ڈوزیئر کے مطابق خبرکاتفصیلی تجزیہ علیحدہ مراسلے میں ارسال کیاجارہا ہے۔ حکومت پاکستان کوامیدہے خبرکے ذمہ داروں کیخلاف کارروائی ہوگی۔ بی بی سی معافی مانگ کرمتعلقہ خبراپنی ویب سائٹ سے ہٹائے، امیدہے آئندہ پاکستان مخالف جعلی خبروں کی اشاعت سے اجتناب کیاجائےگا۔

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔