کرنٹ اکاﺅنٹ خسارہ 14 ارب ڈالر سے تجاوز کر گیا


کراچی( 24نیوز )رواں مالی سال دس ماہ کا کرنٹ اکاﺅنٹ خسارہ 14 ارب ڈالر سے تجاوز کر گیا،درآمدات اور بیرونی قرضوں کی واپسی کے اخراجات بڑھنے سے کرنٹ اکاونٹ خسارہ 50 فیصد بڑھ گیا۔
اسٹیٹ بینک کے مطابق جولائی سے اپریل کے اختتام تک بیرونی کھاتوں میں 14 ارب 3 کروڑ 50 لاکھ ڈالر کے رکارڈ خسارے کا سامنا رہا،رواں مالی سال کے دوران ملکی برآمدات اگر چہ گزشتہ سال کے مقابلے میں 13.3 فیصد زیادہ رہیں،، ترسیلات زر بھی پہلے سے بڑھ گئیں تاہم درآمدی بل میں میں 17 فیصد اضافے اور بیرونی قرضوں کی واپسی کے اخراجات بڑھنے سے دس ماہ کے دوران ہی خسارہ جی ڈی پی کے 5.3 فیصد تک پہنچ گیا۔

یہ بھی پڑھیں: گرانفروشوں،حکمرانوں نے رمضان المبارک کو کمائی کا ذریعہ بنالیا

حکومت نے پورے مالی سال کا کرنٹ اکاونٹ خسارہ جی ڈی پی کے 1.2 فیصد تک رکھنے کا ٹارگٹ رکھا تھا،، دس ماہ میں حکومت کو اشیااور سروسز کی برآمدات 24 ارب 87 کروڑ ڈالر حاصل ہوئے،، لیکن پیٹرولیم مصنوعات اور دوسری درآمدات کا بل 54 ارب 9 کروڑ ڈالر تک پہنچ گیا،، رپورٹ کے مطابق رواں مالی سال دس ماہ کی جی ڈی پی کا حجم 264 ارب 33 کروڑ 50 لاکھ ڈالر رہا۔

اظہر تھراج

صحافی اور کالم نگار ہیں،مختلف اخبارات ،ٹی وی چینلز میں کام کا وسیع تجربہ رکھتے ہیں