حکومت نے عوام پر 100 ارب روپے کا اضافی بوجھ ڈال دیا

حکومت نے عوام پر 100 ارب روپے کا اضافی بوجھ ڈال دیا


اسلام آباد( 24نیوز ) پی ٹی آئی حکومت نے عوام پر 100 ارب روپے کا اضافی بوجھ ڈال دیا، سینکڑوں درآمدی اشیاءپر ریگولیٹری ڈیوٹیز لگا دی گئیں، ایف بی آر نے 570 اشیا پر ریگولیٹری ڈیوٹیز بڑھانے کا نوٹیفکیشن جاری کردیا۔

تفصیلات کے مطابق کھانے پینے کی اشیا سمیت روز مرہ استعمال کی سینکڑوں چیزوں کی قیمتوں میں ہوشربا اضافہ ہوگیا،پولٹری، فش اور ڈیری مصنوعات پر 10 فیصد ڈیوٹی لگائی گئی، دودھ اور کریم پر 25 فیصد دہی پر 20 فیصد، پنیر پر 50 فیصد، شہد پر 30 فیصد ،درآمدی پھلوں اور سبزیوں پر 10 فیصد ڈیوٹی لگائی گئی ہے،امپورٹڈ کوکونٹ اور ڈرائی فروٹس پر 25 فیصد، چیری اور آڑو پر 45 فیصد ڈیوٹی عائد،میدا، سوجی اور سویوں پر 25 فیصد،چاکلیٹ، پیسٹری، کیک اور بسکٹ پر 20 فیصد ڈیوٹی لگے گی۔

پائن ایپل پر 40 فیصد، جوسز پر 60 فیصد، آئیس کریم پر 20 اور منرل واٹر پر 30 فیصد ،پرفیوم، میک اپ،شیونگ سامان پر 50 فیصد، لیدر مصنوعات پر 30 فیصد، جوتوں پر 40فیصد، سرامکس پر 40 فیصد،بجلی کے آلات پر 30 فیصد، ایل سی ڈی، ایل ای ڈی پر 40فیصد اور سی کے ڈی کٹس پر 40 فیصد،سم کارڈز پر ڈیوٹی کی شرح 5 فیصد، سائیکل پر 10 فیصد، سیگریٹ پر 30 فیصد، پان پر 400 روپے فی کلوڈیوٹی لاگو کردی گئی۔

درآمدی اشیا پر ڈیوٹیز بڑھنے سے ان کی قیمتیں عام آدمی کی پہنچ سے دور ہو جائیں گی تاہم مثبت پہلو یہ ہے کہ صارفین میں پاکستانی مصنوعات خریدنے کا رجحان بڑھے گا۔