تیل کی سپلائی بحال،سعودی آئل تنصیبات پر حملوں میں کس ملک کا اسلحہ استعمال ہوا؟

تیل کی سپلائی بحال،سعودی آئل تنصیبات پر حملوں میں کس ملک کا اسلحہ استعمال ہوا؟


ریاض( 24نیوز )سعودی آرامکو تنصیبات پر حملوں کے تین روز کے بعد تیل کی سپلائی بحال  کردی گئی،سعودی حکام آج حملے میں استعمال ایران کے ہتھیار میڈیا کو دکھائیں گے۔

تفصیلات  کے مطابق سعودی عرب کے وزیر توانائی شہزادہ عبدالعزیز بن سلمان نے کہا ہے کہ آرامکو کی تنصیبات پر حملوں کے تین روز کے بعد تیل کی سپلائی مکمل طور پر بحال کردی گئی ہے، سعودی عرب کے شہر جدہ میں نیوز کانفرنس میں وزیر توانائی نے کہا کہ سعودی آرامکو کی تنصیبات پر حملوں کے عالمی مارکیٹ پر اثرات مرتب ہوئے ہیں اور جو صارفین سعودی عرب سے تیل نہیں بھی خرید کرتے وہ بھی متاثر ہوئے ہیں۔

شہزادہ عبدالعزیز نے کہا کہ اکتوبر میں سعودی عرب کی یومیہ پیداوار 98لاکھ بیرل ہوجائے گی،انھوں نے عالمی برادری پر زوردیا کہ وہ عالمی معیشت اور توانائی کی مارکیٹ پر حملہ کرنے والے عناصر کے خلاف سخت کارروائی کرے،سعودی عرب اس ماہ کے دوران میں اپنے صارفین کو تیل کی مکمل سپلائی مہیا کرے گا اور ستمبر کے اختتام تک تیل کی یومیہ پیداوار ایک کروڑ دس لاکھ بیرل تک پہنچ جائے گی۔

اس موقع پر آرامکو کے چیئرمین یاسر الرمیان نے کہا کہ ان حملوں سے کمپنی کے حصص کی عالمی سٹاک مارکیٹ میں پہلی مرتبہ فروخت کے لیے تیاریاں متاثر نہیں ہوں گی۔

سعودی وزارت دفاع نے ایک بیان جاری کیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ آئل تنصیبات پر حملوں سے متعلق آج سعودی عرب میں اہم پریس کانفرنس کی جائے گی،پریس کانفرنس میں حملے میں استعمال ہونے والے ایران کے ہتھیار دکھائے جائیں گے،پریس کانفرنس مقامی وقت کے مطابق شام کو ہوگی۔

واضح رہے کہ آئل تنصیبات پرحملے سے متعلق اہم پریس کانفرنس آج ہوگی،سعودی عرب کے شہر بعقیق میں واقع آئل فیلڈ پر ہفتے کی صبح ڈرون طیاروں سے حملہ کیا گیاتھا۔