چین میں پاکستانی طالب علم کی موت پر دفتر خارجہ کی وضاحت

چین میں پاکستانی طالب علم کی موت پر دفتر خارجہ کی وضاحت


اسلام آباد ( 24 نیوز ) دفتر خارجہ نے وضاحت کی ہے کہ چینی صوبے لیاؤننگ کی جیان زو یونیورسٹی میں زیر تعلیم پاکستانی طالبعلم اسامہ احمد خان نے خودکشی کی ہے،  طالبعلم کو تشدد کے بعد قتل کیے جانے سے متعلق سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی ویڈیو جعلی ہے۔

ترجمان دفتر خارجہ کی جانب سے جاری کیے گئے بیان کے مطابق واقعہ  کی اطلاع ملنے پر چین میں پاکستان کے سفیر نے ایک عہدیدار کو ’شین یانگ‘  بھیجا، جہاں انہوں نے یونیورسٹی کی فیکلٹی اور طلبہ کے ساتھ ساتھ پولیس حکام سے بھی ملاقات کی جبکہ اس دوران وہ متوفی طالبعلم کے اہلخانہ سے بھی رابطے میں رہے اور انہیں چینی حکام کی مکمل سپورٹ حاصل رہی۔

دفتر خارجہ کے مطابق طالبعلم کی میت 17 نومبر 2018 کی صبح صوبے لیاؤننگ سے دارالحکومت بیجنگ پہنچادی گئی، جو آج رات تک پاکستان منتقل کردی جائے گی اور اس سلسلے میں تمام انتظامات مکمل کرلیے گئے ہیں۔ بیان میں مزید کہا گیا کہ سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی ویڈیو جعلی اور اسامہ احمد خان کی نہیں ہے۔

وزارت خارجہ نے استدعا کرتے ہوئے تمام لوگوں سے درخواست کی ہے کہ اس طرح کے معاملات میں سنسنی اور 'جعلی خبریں' پھیلانے سے گریز کریں۔ دوسری جانب نائب چینی سفیر لی جیان نے بھی واقعے کو خود کشی قرار دیتے ہوئے بتایا ہے کہ اسامہ نے مرنے سے قبل گھر والوں کو میسیج کیا کہ وہ اسے معاف کر دیں۔