ایون فیلڈ ریفرنس: شریف خاندان کی استثنیٰ کی درخواست مسترد ہوگئی

ایون فیلڈ ریفرنس: شریف خاندان کی استثنیٰ کی درخواست مسترد ہوگئی


اسلام آباد(24نیوز)احتساب عدالت اسلام آباد میں شریف خاندان کے خلاف نیب ریفرنسز کی سماعت آج ہوئی۔ نواز شریف اور مریم نواز کی حاضری سے استثناء کی درخواست کی گئی  جو کہ احتساب عدالت نے مسترد کردی۔

تفصیلات کے مطابق سابق وزیر اعظم نواز شریف اور مریم نواز لندن میں ہونے کے باعث احتساب عدالت میں پیش نہیں ہو سکے، ملزمان کے وکیل کی جانب سے آج کی حاضری سے استثنیٰ کی درخواست دائر کی گئی۔

اہم خبر: بلاول بھٹو زرداری اگر سیاست دان نہ ہوتے تو کیا ہوتے؟

امجد پرویز نے دلائل دیت ہوئے کہا  کہ کلثوم نواز کینسر کی مریضہ ہے 17 اپریل کو معلوم ہوا کہ مریضہ کو ایمرجنسی حالت میں ہسپتال منتقل کیا گیا، مریضہ کی ریڈیو تھیراپی ہو رہی ہے، وہ ہسپتال میں داخل ہیں۔ امجد پرویز نے کلثوم نواز کی میڈیکل رپورٹ عدالت میں پیش کی۔انھوں نے کہا اس اہم موقع پر نواز شریف اور مریم نواز کا وہاں ہونا لازمی ہے۔جس پر نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ میڈیکل رپورٹ کے ساتھ کوئی ای میل نہیں کہ انہیں ایمرجنسی میں بلایا گیا ہے۔

انھوں نے کہا حلف دیتا ہوں کہ اگر عدالت استثناء دے تو اس کا غلط استعمال نہیں کیا جائے گا۔جب بھی عدالت طلب کرے گی ملزمان حاضر ہوں گے۔انھوں نے کہا ملزمان کے یہاں نہ ہونے سے عدالتی کارروائی پر اثر نہیں پڑے گا،انسانی ہمدردی کی بنیادوں پر ایک ہفتے کا استثناء دیا جائے، امجد پرویز نے کہا کپٹن صفدر یہاں موجود ہیں۔

نیب کے پراسیکیوٹر افضل قریشی نے کہا  نواز شریف اور مریم نواز نے بیرون ملک جانے کی عدالت سے اجازت نہیں لی، حاضری سے استثناءکے لیے ملزم کا عدالت میں پیش ہو کر استثناء مانگنا ضروری ہے۔

اہم خبر: اگلے ساٹھ دنوں میں ن لیگ کی سیاست کا تختہ الٹ جائے گا

دوسری جانب لندن میں موجود سابق وزیراعظم نواز شریف نے کہا ہے کہ جب عدالت نے بلایا وہ حاضر ہوجائیں گے۔ بیگم کلثوم نواز کے حوالے سے انھوں نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ابھی وہ زیر علاج ہیں اور ٹیسٹ کے مطابق ان کے جسم میں کینسر بڑھنے کے امکانات موجود ہیں۔ انھوں نے قوم سے اپیل کی ہے کہ بیگم کلثوم کے لیے دعا کریں۔

واضح رہے کہ نواز شریف اپنی صاجزادی مریم نواز کے ہمراہ 18 اپریل کو اپنی زوجہ محترمہ کی عیادت کرنے لندن روانہ ہوئے تھے۔