وفاقی کابینہ میں ردوبدل کی مزید وجوہات سامنے آگئیں

وفاقی کابینہ میں ردوبدل کی مزید وجوہات سامنے آگئیں


اسلام آباد(24 نیوز) وفاقی کابینہ میں ردوبدل کی مزید وجوہات سامنے آگئیں، محکمانہ کارکردگی کی خفیہ رپورٹس، میڈیا رپورٹس، مانیٹرنگ اور اور عوامی رائے کابینہ میں ردوبدل کا سبب بنی۔

ذرائع کے مطابق بعض وزراء کی کارکردگی سے وزیر اعظم سخت نالاں تھے اور گزشتہ ماہ ہی ہٹانے کا فیصلہ کر لیا تھا۔ کمزور معاشی پالیسی، ایمنسٹی سکیم، ڈالرمہنگا ہونا اسد عمر کی وزارت لے گیا۔ عمران خان ادویات مہنگی ہونے پرعامرکیانی سے ناراض ہوئے۔ ایم ڈی پی ٹی وی کا معاملہ اورسخت لہجہ فواد چودھری کی تبدیلی کی وجہ بنا۔گیس بلوں میں اضافے کا معاملہ غلام سرور خان کی تبدیلی کا سبب بنا، اعظم سواتی، اعجازشاہ، حفیظ شیخ کو وزارتیں دینے کا فیصلہ پارٹی مشاورت سے ہوا۔

ذرائع کے مطابق ایمنسٹی اسکیم، مہنگائی میں آضافہ، ایف بی آر کی ناکامی اور ڈالر مہنگا ہونا اسد عمر کی وزارت کو لے ڈوبا۔ وزیر اعظم عمران خان پر اسد عمر کو ہٹانے پر پارٹی ارکان، کابینہ اور میڈیا کا دباؤ بھی تھا۔ وفاقی کابینہ اجلاسوں میں بھی اسد عمر کی معاشی پالیسیوں ہر خوب تنقیدی ہوتی رہی، پارٹی رپورٹس اور خفیہ کی خفیہ رپورٹس اسد عمر کے حق میں نہ آئی۔ وزیر اعظم عمران خان متعدد بار مہنگائی میں اضافے کی شکایت بھی اسد عمر سے کر چکے تھے جس پر اسد عمر وزیر اعظم سے مزید وقت دینے کے لیے قائل کرتے رہے لیکن اس بار اسد عمر وزیر اعظم کو مزید وقت دینے کے لیے قائل نہ کر سکے اور وزیر اعظم نے بڑا قدم اٹھانے کا فیصلہ کیا۔ ذرائع کے مطابق وزیر اعظم نے اسد عمر کو وزارت چھوڑنے پر مائل کرنے میں 2 دن لگائے، اسد عمر نے اعتماد میں لے کر استعفے کا اعلان کیا۔

ذرائع کے مطابق گیس کے ہوشربا بلز پر تحقیقاتی رپورٹ نے وزیر پٹرولیم کو دفاعی پوزیشن پرلاکھڑا کیا،  گیس بلوں پر حکومت کو سخت دباو تھا،اس بنیاد پر غلام سرور خان کو بدلنے کا کڑوا گھونٹ بھرنا پڑا۔ ذرائع کے مطابق ادویات کی قیمتوں میں اضافہ عامر کیانی کی وکٹ لے اڑا۔ ذرائع کے مطابق وزیر اعظم عمران خان ادویات میں قیمتوں میں اضافے ہر عامر کیانی سے سخت ناراض تھے، ادویات کی قیمتوں میں اضافہ پر وزیر اعظم نے عامر کیانیبتج ناراضگی کا پیغام پہنچایا۔

وفاقی وزیر اطلاعات کا قلمدان تبدیل کرنے کی بڑی وجہ ایم ڈی پی ٹی وی کے ساتھ تنازعہ اور ہارٹی قیادت پر کھل کر تنقید بنی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیر اطلاعات کی سینئر پارٹی رہنماوں پر تنقید بھی مہنگی پڑی، اس کے باوجود مرضی کی وزارت لے لی، فواد چوہدری وزیر اعظم عمران خان سے خود سائینس و ٹیکنالوجی کا قلمدان دینے کی درخواست بھی کر چکے تھے، وزیر اعظم نے اعظم خان سواتی کی واپسی تک وزارت سائنس اینڈ ٹیکنالوجی خالی چھوڑ رکھی تھی، فواد چوہدری کو اکاموڈیٹ کرنے کے لئے اعظم خان سواتی کو پارلیمانی وزارت میں ایڈجسٹ کیا گیا۔

شہریار آفریدی کو اختیارات کے باجود کارکردگی نہ دکھانے پر تبدیل کیا گیا جبکہ فردوس عاشق اعوان کو کابینہ میں شامل کرنے کا فیصلہ بھی گزشتہ ماہ ہی کرلیا گیا تھا، فردوس عاشق اعوان کو وزیر اعظم عمران خان نے گزشتہ روز فون پر نئی زمہ داریاں دینے کی خود اطلاع بھی دی۔ اعظم سواتی،اعجاز شاہ اور حفیظ شیخ، کو وزارتیں دینے کا فیصلہ پارٹی میں اتفاق رائے سے کیا گیا۔ ڈاکٹر ظفر اللہ مرزا کا ان کی قابلیت کی بناء پر وزارت صحت میں بطور معاون آزمانے کا فیصلہ کیا گیا۔