ایک اور ننھی کلی درندگی کا شکار، پولیس مجرم پکڑنے میں ناکام

ایک اور ننھی کلی درندگی کا شکار، پولیس مجرم پکڑنے میں ناکام


لاہور( 24نیوز )  9 سالہ بچی کا قاتل کون ہے؟ کس نے بے دردی سے عائشہ کو ابدی نیند سلایا۔ پولیس اصل قاتل کوتلاش کرنے میں کامیاب نہ ہوسکی۔بچی کے ماموں سمیت 3 افراد زیر حراست افراد کا ڈی این اے کروایا جائے گا۔

لاہور میں بھی ہوا قصور کی زینب کےقتل کا ری پلے۔ لوہاری گیٹ میں 9سالہ عائشہ کوگلے میں پھندا ڈال کرابدی نیندسلادیا گیا مگر پولیس کی روایتی غفلت اورسستی کانتیجہ یہ ہےکہ ابھی تک اصل قاتل نہیں پکڑے جاسکے۔

بچی کےماموں سمیت 3 افراد کو حراست میں لیا گیا جن سے تفتیش جاری ہے۔ اب ملزمان کا ڈی این اے کرانے کافیصلہ کیا گیا ہے۔ پولیس کا کہنا ہےکہ مقتولہ عائشہ کی والدہ عمرہ کرنے گئی ہیں۔عائشہ کے والد کاکہنا ہےکہ بچی کو زیادتی کے بعدقتل کیا گیا۔

قصور کی زینب کے والد حاجی امین تعزیت کیلئے لوہاری پہنچے جہاں انہوں نے عائشہ کے والد طارق جمیل سے ملاقات کی۔  ہر پلیٹ فارم پر مدد کی یقین دہانی کرائی۔انھوں نےکہا کہ حکومت انصاف فراہم کرے۔

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔