اٹارنی جنرل اشتراوصاف مستعفی، ایڈوکیٹ جنرل پنجاب عاصمہ حامد فارغ

اٹارنی جنرل اشتراوصاف مستعفی، ایڈوکیٹ جنرل پنجاب عاصمہ حامد فارغ


 24 نیوز: اٹارنی جنرل اشتراوصاف نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا۔ اٹارنی جنرل نے استعفی صدرمملکت کوبھجوادیا۔ ایڈووکیٹ جنرل پنجاب عاصمہ حامد کو عہدے سے ہٹا دیا گیا، نگران وزیر اعلیٰ حسن عسکری کی ہدایت پر عاصمہ حامد کو ہٹایا گیا۔

 24 نیوز ذرائع کے مطابق اٹارنی جنرل اشتر اوصاف نےاستعفیٰ دے دیا۔ اشتراوصاف اٹارنی جنرل نے استعفی صدرمملکت کوبھجوادیا۔ اٹارنی جنرل نےاستعفیٰ کا فیصلہ عام انتخابات کے تناظرمیں کیا۔ اٹارنی جنرل نے کسی بھی سیاسی جماعت کے اعتراض اٹھائے خود ہی مستعفی ہونے کا فیصلہ کیا۔

اشتر اوصاف علی 29 مارچ 2016 کو اٹارنی جنرل تعینات ہوئے تھے، اٹارنی جنرل سابق وزیراعظم نواز شریف کے معاون خصوصی بھی رہ چکے ہیں۔

یہ خبر بھی پڑھیں: نگران حکومت کی کپتان پر نوازشیں، چار مطالبات پورے کردیئے

دوسری جانب نگران حکومت نے اپنا پہلا شکار کر ڈالا، پی ٹی آئی کا ایک اور مطالبہ پورا کر دیا گیا۔ نگران وزیراعلیٰ پنجاب حسن عسکری کے حکم پر ایڈووکیٹ جنرل پنجاب عاصمہ حامد کوعہدے سے ہٹا دیا گیا ہے ، تاہم وہ بطور ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل پنجاب فرائض سرانجام دیتی رہیں گی۔ عاصمہ حامد سابق وفاقی وزیرقانون زاہد حامد کی بھتیجی ہیں۔

علاوہ ازیں نگراں حکومت نے سابقہ حکومت کے آخری دنوں میں تعینات 10 اسسٹنٹ ایڈووکیٹ جنرل کو بھی عہدے سے ہٹادیا ہے۔ فارغ ہونے والوں میں بیرسٹر اسجد سعید، عامر ثنااللہ، محمد طارق محمود، احمد حسن رانا، محمد طارق ندیم، بیرسٹر بشری صادق، آصف بھٹی، چودھری محمد جواد یعقوب، خالد مسعود غنی، بیرسٹر امیرعباس علی شامل ہیں۔ نگراں وزیراعلیٰ کی منظوری کے بعد نوٹی فیکشن جاری کردیا گیا۔

ترجمان تحریک انصاف فواد چوہدری نے عاصمہ حامد کو ہٹانے کے فیصلے کا خیر مقدم کیا ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ ، انہیں ہٹانے کا فیصلہ درست قدم ہے، ہمارا مطالبہ ہے کہ پنجاب کی ضلعی انتظامیہ کو بھی جلد ازجلد تبدیل کیا جائے۔