چیف جسٹس نے 2مقدمات کے فیصلے سنادئیے،ایک ملزم گرفتار

چیف جسٹس نے 2مقدمات کے فیصلے سنادئیے،ایک ملزم گرفتار


اسلام آباد( 24نیوز ) چیف جسٹس پاکستان آصف سعید کھوسہ نے ریمارکس دیئے ہیں کہ انشا اللہ دو تین ماہ تک 2019 کی اپیلوں پرسماعت شروع ہوگی،زیرالتوا مقدمات کی شرح صفررہ جائے گی، سپریم کورٹ نے کراچی پورٹ ٹرسٹ کے مینیجرایچ آرمحمود شریف کی ضمانت قبل از گرفتاری اور بیوی کے قاتل کی رہائی کیخلاف اپیل خارج کردی۔

ملزم کی سزا میں کمی سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ریمارکس دیئے کہ اس وقت 2018 کی اپیلوں کی سماعت کی جارہی ہے،2 سے 3 ماہ تک 2019 کی اپیلیں سنیں گے،اللہ کا شکرہے فاصلہ کم ہوتا جارہا ہے۔

سپریم کورٹ نے کراچی پورٹ ٹرسٹ میں ملازمین کی غیر قانونی مستقلیوں کے کیس میں ملزم منیجر ایچ آر محمود شریف کی ضمانت قبل از گرفتاری خارج کردی،ملزم کو نیب نے گرفتار کرلیا۔

دوران سماعت وکیل ملزم نے دلائل دیئے کہ بطور منیجر ان کے موکل کا کردار صرف ڈاکیا کا تھا،سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی نے دورہ گوادر کے دوران ملازمین کو مستقل کرنے کا اعلان کیا،بابر غوری وزیرتھے۔جسٹس عظمت سعید شیخ نے استفسار کیا کہ کیا بابر غوری کو نیب نے گرفتار کیا؟؟وکیل نیب نے بتایا وہ مفرور ہیں جسٹس عظمت سعید شیخ کا کہنا تھا کہ نیب مقدمات میں ضمانت اب صرف غیر معمولی حالات میں ہی ہو گی۔

اہلیہ کی تصاویر انٹرنیٹ پر ڈالنے سے متعلق کیس میں عدالت نے اہلیہ کی شوہرندیم کےخلاف ضمانت منسوخی کی درخواست مسترد کردی، چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ تصویر میں ملزم خود بھی موجود ہے،کوئی اپنی بے عزتی خود تو نہیں کرتا،عدالت نے یہ بھی قرار دیا کہ استغاثہ یہ ثابت کرنے میں ناکام رہا کہ ای میل ہیک ہوا، سپریم کورٹ نے بیوی کے قتل کے ملزم شمس الرحمن کی سزا معطلی کے ہائیکورٹ کے فیصلے کیخلاف اپیل خارج کردی،عدالت نے فیصلہ سنایا کہ استغاثہ جرم ثابت نہیں کرسکا۔