نقیب قتل کیس: ایس ایس پی راؤ انوار سپریم کورٹ سے گرفتار

نقیب قتل کیس: ایس ایس پی راؤ انوار سپریم کورٹ سے گرفتار


کراچی (24نیوز) نقیب اللہ قتل کیس میں بڑی پیشرفت  ملزم سابق ایس ایس پی ملیر راؤ انوار سپریم کورٹ میں پیش ہوگئے، راؤ انوار ماسک پہن کر عدالت پہنچے،سفیدرنگ کی گاڑی میں سپریم کورٹ آئے۔

تفصیلات کے مطابق نقیب اللہ قتل کیس کے مرکزی ملزم و سابق ایس ایس پی ملیر راؤ انوار کی اچانک سپریم کورٹ آمد نے سب کو حیران کر دیا،راؤ انوار اپنے چہرے پر ماسک پہنے کر سخت سیکورٹی کے ہمراہ سپریم کورٹ پہنچے۔ راؤ انوار سپریم کورٹ کے کمرہ عدالت نمبر 1میں موجودتھے  جبکہ چیف جسٹس کی سربراہی میں تین رکنی بینچ دیگر کیسز کی سماعت کی اور  چیف جسٹس نے راؤ انوار کی گرفتاری کا حکم دے دیا ہے۔

 واضح رہے کہ سپریم کورٹ کی سیکورٹی کی صورتحال نہایت سخت کر دی گئی تھی جبکہ تمام گیٹس پر نفری پڑھا دی تھی راؤ انوار اچانک سپریم کورٹ کے باہر ایک گاڑی سے نمودار ہوئے۔چیف جسٹس نے راؤ انوار کی گرفتاری کا حکم دیتے ہوئے پولیس کو ان کی سکیورٹی یقینی بنانے کی ہدایت کردی۔

یہ بھی ضرور پڑھیں:فرانس کے سابق صدر نیکلس سرکوزی گرفتار      

سپریم کورٹ کے حکم پرسندھ پولیس نے راو انوار کو عدالت کے اندرہی گرفتارکرلیا۔ راوانوار چیف جسٹس حکم پر پیش ہوئے اور بولےکہ عدالت کے حکم پر خود کوسرنڈرکردیا۔چیف جسٹس نے جواب دیا کہ آپ نے کوئی احسان نہیں کیا۔کہاں گئی وہ بہادری۔اتنے دن کہاں چھپے رہے۔جس پر راو انوارکاکہنا تھا ا نہیں خطرات تھے اس لئے روپوش رہا۔

چیف جسٹس نے استفسارکیا کہ آپ نے عدالت پراعتماد کیوں نہیں کیا۔آپ نے خط لکھنے کا جوطریقہ اپنایا وہ ٹھیک نہیں تھا۔عدالت آزاد ہے  دباؤ میں نہیں آئیں گے۔ راو انوار کو سندھ پولیس کے حوالے کر دیا گیا۔

دوسری جانب نقیب اللہ محسود کے والد کا کہنا تھا راؤانوار آج عدالت میں پیش ہوئے۔امید ہے سپریم کورٹ سزا سنائے گی۔انہوں نے مزید کہا کہ نقیب اللہ کے لیے پوری قوم نے آواز اٹھائی