دل دہلانے والا واقعہ،10سالہ بچی زیادتی کے بعد قتل

دل دہلانے والا واقعہ،10سالہ بچی زیادتی کے بعد قتل


اسلام آباد(24نیوز) زیادتی کا نشانہ بننے والی 10 سالہ ' فرشتہ ' کی ابتدائی پوسٹمارٹم رپورٹ 24 نیوز نے حاصل کر لی، فرشتہ کی لاش ایک ہفتہ پرانی ہے، فرشتہ کی لاش کو جانوروں نے نقصان پہنچایا ہے۔

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد کے علاقے شہزاد ٹاؤن میں زیادتی کے بعد قتل ہونے والی 10سالہ بچی کے لواحقین نےاحتجاج کیا،مقتول بچی کےوالدکاکہناتھاکہ بیٹی کوجانوروں کے منہ سے چھڑا کر لایا،3ماہ بھی احتجاج کرنا پڑا تو کروں گا، 15 تاریخ کو بچی کے اغواء کی ایف آئی آر درج کرانے گیا تو پولیس والوں نے گمشدگی کی رپورٹ کاٹ دی، اس کے بعد تھانے جاتا تو گیٹ سے اندرہی نہیں جانے دیا جاتاتھا،تھانے میں ایس ایچ او اور پولیس والے بچی کے بارے بیہودہ قسم کی باتیں کرتے، میری التجا ہے کہ اس پورے تھانے کے عملے کو نوکری سے نکالاجائے، انصاف لوں گا یا جان دوں گا۔

شہزاد ٹاؤن کے ایس ایچ او کاکہناتھاکہ جونہی والدین رپورٹ درج کرانے آئے میں نے ایف آئی آر درج کی، بچی کے بھاگ جانے کے حوالے سے میری والدین سے کوئی بات نہیں ہوئی، لواحقین نےننھی فرشتہ کی لاش ترامڑی چوک پر رکھ کر احتجاج کیا، ان کاکہناتھاکہ ' فرشتہ ' سے زیادتی اور قتل کی ذمہ دار پولیس ہے، پانچ دن بعد ایس ایچ او تھانہ شہزاد ٹاؤن نے لڑکی کو اپنی مرضی سے فرار ہونے کا الزام لگا کر رپورٹ درج کرنے انکار کیا،مقتولہ کے بھائی کاکہناتھاکہ گمشدگی کی رپورٹ تھانے میں درج کروانے گئے تو ہم سے تھانے کی صفائی کا کام لیا جاتا تھا،ایس ایچ او کی معطلی تک احتجاج جاری رہے گا۔

دوسری جانب ابتدائی رپورٹ لاش گلنے کی وجہ سے کافی شواہد نہ مل سکے، ابتدائی رپورٹ فرشتہ کی لاش کو جانوروں نے نقصان پہنچایا ہے، ہاتھ بازوں پیر پر جانوروں کے کاٹنے کےنشانات ہیں، جسم پر تشدد کے نشانات واضح ہیں، لاش گلنے اور شواہد نا ملنےکی وجہ سےڈاکٹروں کو مکمل رپورٹ تیار کرنے میں مشکلات تین دن تک مکمل حتمی رپورٹ دی جائے گی۔