کمسن  گھریلوملازمہ پروحشیانہ تشددکاایک اور واقعہ منظر عام پرآگیا

کمسن  گھریلوملازمہ پروحشیانہ تشددکاایک اور واقعہ منظر عام پرآگیا


راولپنڈی (24نیوز)  راولپنڈی میں ڈاکٹر عمارہ ریاض اور ان کے شوہر محسن ریاض نے اپنی گھریلوملازمہ 11 سالہ کنزہ کو تشدد کا نشان بنایا،بچی کے والد پر مبینہ طور پر دباؤ ڈال کر حلف نامہ لکھوانے کا بھی انکشاف ہوا ہے۔

تفصیلات کے مطابق راولپنڈی ولایت کالونی کی رہائشی میجر ڈاکٹر عمارہ ریاض اور ان کے شوہر محسن ریاض نے اپنی گھریلوملازمہ 11 سالہ کنزہ کو تشدد کا نشان بنایا،  فیصل آباد کے علاقہ سمندری کی رہائشی کنزہ کا تعلق غریب گھرانے سے ہے، اس کے والد نے تین سال پہلےمخص 5 ہزار  روپے ماہانہ تنخواہ پر اپنی کمسن بچی کو ملازمت کےلئے  راوالپنڈی بھیجا تھا،گزشتہ روز جب تشدد زیادہ بڑھا تو کنزہ نے اپنی جان بچانے کے لئے پڑوس کے گھر میں پناہ لی،اس سلسلے میں پنجاب پولیس نے ہینڈ آؤٹ بھی جاری کیا جس کے مطابق پڑوس میں رہائش پذیر کرنل سجاد نے پولیس کو اطلاع دی کے ڈاکٹر محسن کی گھریلوملازمہ کو تشدد کا نشانہ بنا یا جا رہا ہےاطلاع ملتے ہی پولیس موقع پر پہنچی تو بچی کا والد بھی پہنچ چکا تھا۔

بچی نے پولیس حکام کو بتایا کہ مالکن اور مالک بیلٹ اور رسی سے مارتے تھے ، نہ کھانا دیتےنہ رات کو سونے دیتے تھے، جب بھوک زیادہ لگتی تو تنگ آگر  کچھ چوری کرتی تو وہ اور زیادہ مارتے تھے،بچی پرتشدد کے بعد پولیس اور دیگر ادارے حرکت میں آ گئے،سی پی او  راولپنڈی عباس نے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے کارروائی نہ کرنے والے اے ایس آئی کو معطل کر دیا،سی پی او کا کہنا تھا  کہ کنزہ کو راولپنڈی پولیس فیصل آباد سے راولپنڈی لا رہی ہے ، بچی کا میڈیکل کرایا جائے گا اور میاں بیوی کے خلاف جرم ثابت ہونے پر کارروائی کی جائے گی، دوسری جانب متاثرہ بچی کے والد پر دباؤ ڈال کر حلف نامہ لکھوانے کا بھی انکشاف ہوا ہے۔

اظہر تھراج

Senior Content Writer