سندھ اسمبلی میں نقیب اللہ، انتظار اور مقصود کے مبینہ قتل کی گونج


کراچی (24 نیوز) سندھ اسمبلی نے عمران خان اور شیخ رشید کی جانب سے پارلیمنٹ کے خلاف توہین آمیز زبان استعمال کرنے پر مذمتی قرارداد کثرت رائے سے منظور کر لی جبکہ کراچی میں انتظار ، نقیب اور مقصود کے قتل کے خلاف بھی ایوان میں آواز گونجتی رہی۔

سندھ اسمبلی کے اجلاس میں پاکستان پیپلز پارٹی کی رکن سندھ اسمبلی غزالہ سیال نے پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان اور عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد کے خلاف تحریک استحقاق پیش کی جس کو مذمتی قرار داد میں تبدیل کیا گیا اور قرار داد کی ایوان میں موجود پیپلز پارٹی، نواز لیگ، فنکشنل لیگ اور ایم کیوایم نے حمایت کی۔ قرار داد میں موقف اختیار کیا گیا کہ پارلیمنٹ کے لئے توہین آمیز جملے استعمال کرنے پر عمران خان اور شیخ رشید کی رکنیت قوانین کے تحت ختم کی جائے۔

قرار داد پر نثار احمد کھوڑو اور دیگر اراکین نے بحث میں حصہ لیا۔ سندھ اسمبلی نے قرار داد پر بحث کے بعد مذمتی قرار داد کو کثرت رائے سے منظور کرلیا۔ سندھ اسمبلی کے ایوان میں وقفہ دعا میں انتظار ، نقیب اور مقصود کے قتل اور پولیس کے منفی کردار پر بات کی گئی۔

سندھ اسمبلی کے اجلاس میں محکمہ خوراک کی کارکردگی پر سوالات کے جوابات دیتے ہوئے وزیر خوراک نثار احمد کھوڑو نے گندم کی خرد برد اور محکمہ میں افسران کی کرپشن کا بھی انکشاف کیا۔ اسمبلی اجلاس کی کارروائی غیر معینہ مدت تک ملتوی کردی۔