بجلی کی پیداوار نہ بڑھانے پر سندھ ہائیکورٹ نے کےالیکڑک کیخلاف ایکشن لے لیا

بجلی کی پیداوار نہ بڑھانے پر سندھ ہائیکورٹ نے کےالیکڑک کیخلاف ایکشن لے لیا


کراچی (24 نیوز) سندھ ہائیکورٹ نے بجلی کی پیداوار نہ بڑھانے اور شہر میں غیر منصفانہ لوڈشیڈنگ پر کے الیکٹرک کے سی ای او سمیت دیگر کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کردیا۔ چیئرمین نیپرا طارق سدوزئی اور وائس چیئرمین نیپرا کو بھی توہین عدالت کے نوٹس جاری کردئے گئے۔

 24 نیوز ذرائع کے مطابق سندھ ہائی کورٹ میں بجلی کی پیداوار نہ بڑھانے اور غیرمنصفانہ لوڈشیڈنگ کرنے کے معاملے پر سی ای اوکے الیکٹرک اور دیگرکے خلاف توہین عدالت کی درخواست کی سماعت ہوئی۔

درخواست میں موقف اپنایا گیا کہ سندھ ہائیکورٹ نے کے الیکٹرک کو پیداواری صلاحیت بڑھانے کا حکم دیا تھا، 25 مارچ 2016 کو نیپرا نے کے الیکٹرک کو شوکاز جاری کیا، عدالت نے نیپرا کو شوکاز پر عمل درآمد کرنے کی ہدایت دی۔

یہ خبر بھی پڑھیں: گلگت بلتستان اسمبلی کو مکمل اختیارات مل گئے

درخواست میں کہا گیا بن قاسم پلانٹ خرابی سے ثابت ہوگیا ہے کہ کے الیکٹرک نے پیداواری صلاحیت میں اضافہ نہیں کیا جب کہ نیپرا بھی کے الیکٹرک سے متعلق اپنے فیصلے پر عمل درآمد نہیں کرا پا رہی۔

درخواست میں استدعا کی گئی کہ کے الیکٹرک اور نیپرا حکام کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی کی جائے۔ عدالت نے درخواست پر سماعت کے بعد کے الیکٹرک کے سی ای او، چیف جنریشن اینڈ ٹرانسمیشن افسر، سی ای او ڈسٹری بیوشن اور ہیڈ آف ڈسٹری بیوشن کو توہین عدالت کےنوٹس جاری کردیے۔

دوسر جانب چیئرمین نیپرا طارق سدوزئی اور وائس چیئرمین نیپرا کو بھی توہین عدالت کے نوٹس جاری کردئے گئے۔