قسمت کافیصلہ کل ہوگا

قسمت کافیصلہ کل ہوگا


اسلام آباد(24نیوز) احتساب عدالت کل سابق وزیراعظم نوازشریف کےخلاف فلیگ شپ اورالعزیزیہ ریفرنسز کا فیصلہ سنائے گی، کیسز کتناعرصہ چلےاورعدالتی کارروائیوں میں کب کیاہوا؟ 

تفصیلات کے مطابق نواز شریف کے خلاف العزیزیہ اور فلیگ شپ ریفرنسز کی مجموعی طور پر 183 سماعتیں ہوئیں، نیب کی جانب سے العزیزیہ ریفرنس میں 22 اور فلیگ شپ میں 16 گواہان پیش کئے گئے، دونوں ریفرنسز پر 15 ماہ تک کارروائی ہوئی، اس دوران نواز شریف 130 بار عدالت میں پیش ہوئے، جبکہ نواز شریف کو 15 بار اڈیالہ جیل سے پیشی کیلئے لایا گیا۔

دونوں ریفرنسز پر ابتدائی 103 سماعتیں جج محمد بشیر نے کی تھیں، بعد میں 80 سماعتیں جج ارشد ملک نے کیں، احتساب عدالت نےمختلف اوقات میں نوازشریف کو49سماعتوں پرحاضری سےاستثنیٰ دیا،ریفرنسز پر کارروائی مکمل کرنے کیلئے سپریم کورٹ نے 8 مرتبہ احتساب عدالت کو توسیع دی، العزیزیہ ریفرنس میں نوازشریف نے 152 سوالات جبکہ فلیگ شپ میں 140 سوالات کا جواب دیا۔

العزیزیہ اور فلیگ شپ ریفرنس میں خواجہ حارث نے تفتیشی افسر اور واجد ضیاء پر جرح کیلئے 11 روز کا وقت لیا۔

ذرائع کا کہنا تھا کہ العزیزیہ و فلیگ شپ ریفرنسز پر فیصلہ کل سنایا جائے گا، بے گناہ ٹھہرے تو گھر جائیں گے مگر جرم ثابت ہوا تو سابق وزیراعظم کو دونوں ریفرنسز میں چودہ سال قید بامشقت، جرمانہ، نااہلی اور جائیداد ضبطگی کی سزا ہو سکتی ہے؟نیب نے نواز شریف کے خلاف سیکشن نائن اے فائیو کے تحت ریفرنس دائر کیا کہ سابق وزیراعظم نے پبلک آفس ہولڈر ہوتے ہوئے آمدن سے زائد اثاثے بنائے۔

سابق وزیراعظم العزیزیہ، ہل میٹل اور فلیگ شپ کمپنیوں کے بے نامی مالک ہیں، اور بے نامی دار ہیں ان کے بیٹے حسن و حسین پر عدالت نے فرد جرم عائد کر دی،جبکہ نواز شریف نے صحت جرم سے انکار کر دیا۔

مزید ویڈیوز کیلئے لنک کلک کریں: https://www.youtube.com/channel/UCcmpeVbSSQlZRvHfdC-CRwg/videos