اونچی دکان،پھیکے پکوان،حکومتی کارکردگی ٹاسک فورسز تک محدود

اونچی دکان،پھیکے پکوان،حکومتی کارکردگی ٹاسک فورسز تک محدود


اسلام آباد( 24نیوز ) پاکستان تحریک انصاف کی حکومت نے اپنے 100 روزہ پلان پر عملدرآمد کیلئے ایک درجن سے زائد ٹاسک فورسز ، کئی ایک ورکنگ گروپس اور ایکشن پلان کمیٹیاں تشکیل دے رکھی ہیں، 100 روز میں 65 دن گزر چکے ہیں۔

تحریک انصاف کی حکومت نے اپنے 100 روزہ پلان کے تحت پاکستان کو مدینے کی طرز پر فلاحی ریاست بنانے، بیورو کریسی کو سیاست سے پاک کرنے، اداروں میں میرٹ کے فروغ، فاٹا کو خیبرپختونخوا میں ضم کرنے ، جنوبی پنجاب کو علیحدہ صوبہ بناکر محروم علاقوں میں اقتصادی پیکج دینے ، ایک کروڑ نئی نوکریاں پیدا کرنے، خارجہ پالیسی میں اصلاحات لانے، ملک بھرمیں 10 ارب درخت لگانے، کراچی میں قبضہ مافیا کے خلاف کریک ڈاو¿ن کرنے، اداروں کو سیاست سے پاک کرنے، ٹیکس کا بوجھ، بجلی اور گیس کی قیمت کو کم کرنے، 50 لاکھ سستے گھر بنانے اور کئی نئے سیاحتی مقامات متعارف کرانے کا اعلان کیا تھا۔

100 روزہ پلان کے چھ نکات کے تحت اب تک اس مقصدکیلئے ایک درجن سے زائد ٹاسک فورسز قائم کی گئی ہیں، ان ٹاسک فورسز میں نیب کو مزید خود مختار بنانے کے حوالے سے قوانین کا جائزہ لینے، لوٹی گئی رقم کی بیرون ملک سے واپسی، دیوانی و فوجداری نظام انصاف میں اصلاحات، سول سروس اصلاحات، قومی بچت مہم، سرکاری و تاریخی عمارات کے عوامی استعمال سے متعلق اصلاحات، فاٹا اصلاحات عملدرآمد، کراچی ٹرانسفارمیشن، نیا پاکستان ہاوسنگ اسکیم، سیاحت، توانائی، قومی واٹر پالیسی اور ماحولیاتی تبدیلی سے متعلق ٹاسک فورسز قائم کی گئی ہیں۔

100 روزہ پلان پر عملدرآمد سے متعلق پروگریس ٹریکر کے طور پر ویب سائٹ بھی لانچ کی گئی ہے جس پر موجود کارکردگی دیکھنے سے تعلق رکھتی ہے لیکن مجموعی طور پر ان ٹاسک فورسز میں سے نیب اصلاحات، نیا پاکستان ہاﺅسنگ سکیم، ماحولیاتی تبدیلی، قومی بچت مہم اور سرکاری و تاریخی عمارات سے متعلق ٹاسک فورسز کی کارکردگی یا پیش رفت تو کہیں نہ کہیں دیکھنے کو مل رہی ہے لیکن باقی نکات میں ٹاسک فورسز کے قیام اور معمول کی تقرریوں و تعیناتیوں اور تعارفی اجلاسوں کو بھی کارکردگی اور اقدامات کے طور پر ظاہر کیا جا رہا ہے۔