ملک کے سیاسی استحکام پر سرجیکل سٹرائیک کی کوئی گنجائش نہیں:احسن اقبال

ملک کے سیاسی استحکام پر سرجیکل سٹرائیک کی کوئی گنجائش نہیں:احسن اقبال


لاہور(24نیوز) وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال کا کہنا ہے کہ ملک کے سیاسی استحکام پر بھی سرجیکل اسٹرائیک کی جارہی ہے جس کی کوئی گنجائش نہیں ، ایف اے ٹی اے کا باقاعدہ فیصلہ جون میں آئے گا، ہمیں دباؤ میں لانے کے لیے ہمارے خلاف قرارداد پیش کی گئی، پاکستان نے منی لانڈرنگ اور ٹیرر فنانس کے حوالے سے بہتر اقدامات کیے۔

لاہور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال نے کہا کہ افغانستان کے حوالے سے پاکستان کو امریکا کی طرف سے سیاسی دباؤ کا سامنا ہے، پاکستان اور امریکا کا تعاون افغانستان میں امن کا ذریعہ بن سکتا ہے، دونوں ممالک میں بد اعتمادی کے فروغ سے دونوں کا نقصان ہوگا۔

وزیر داخلہ کا کہنا تھا کہ پاکستان کے دہشت گردی کے خلاف اقدامات امریکا کو خوش کرنے کے لیے نہیں بلکہ قومی مفاد کے لیے ہیں، پاکستان وہ ملک ہے جس نے دہشت گردی کے خلاف سب سے زیادہ کامیابیاں حاصل کیں، پاکستان کی محرومیوں کی اصل وجہ سیاسی عدم استحکام ہے، بدقسمتی سے پاکستان میں پالیسیوں کا تسلسل برقرار نہیں رکھا جا سکا، آج بدقسمتی سے کچھ عناصر نوجوان نسل میں مایوسی پھیلا رہے ہیں۔

احسن اقبال کا کہنا تھا کہ ملک کا سب سے اہم ادارہ پارلیمنٹ ہے، اس کے بطن سے آئین پیدا ہوتا ہے، پارلیمنٹ یہ فیصلہ کرتی ہے کہ سپریم کورٹ کے اندر کتنے جج ہوں گے اور ان کی اہلیت کیا ہوگی۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پاکستان کو شدید ترین سازشوں کا سامنا ہے، ہمارے دشمن انتشار پیھلانے کے لیے اضافی وقت کے ساتھ کام کررہے ہیں، اس لیے ملک میں کوئی ادارہ یا فرد اسے انتشار کی طرف لے کر جائے گا تو وہ ملک دوستی نہیں ہوگی، ہمیں اس وقت یکجہتی کی ضروری ہے۔

وفاقی وزیر داخلہ کا کہنا تھا کہ ہمارا ہمسایہ ملک سرجیکل اسٹرائیک کی دھمکیاں دے رہاہے، ہم ڈٹ کر مقابلہ کریں گے، ملک کے سیاسی استحکام پر بھی سرجیکل اسٹرائیک کی جارہی ہے جس کی کوئی گنجائش نہیں ، ایک طرف دشمن اسٹرائیک کی دھمکیاں دے رہاہے اور ایک طرف استحکام پر ہم خود اسٹرائیک کریں۔

احسن اقبال نے مزید کہا کہ اس وقت کے اقدامات سے تاثر ابھر رہا ہے کہ سیاست میں ٹارگٹ کلنگ کا عمل شروع ہوگیا ہے، ملک کی سیاست بہت آگے نکل چکی ہے، پاکستان کی سیاست اب پرائمری کی طالب علم نہیں ، شہری ہر عمل کا تجزیہ کرتے ہیں، مسلم لیگ (ن) کے خلاف جتنے اقدامات اٹھائے جارہے ہیں اس میں ہماری سیاسی ساکھ میں کمی نہیں ہورہی ہے بلکہ ہماری ہمدردی میں اضافہ ہورہا ہے اس کے لیے تھینک یو سپریم کورٹ کہتا ہوں۔