فیض آباد دھرنا: حکومت کو دھرنا ختم کرانے کیلئے ایک اور ڈیڈ لائن

فیض آباد دھرنا: حکومت کو دھرنا ختم کرانے کیلئے ایک اور ڈیڈ لائن

اسلام آباد (24نیوز) اسلام آباد ہائیکورٹ نے حکومت کوفیض آباد دھرنا ختم کرانے کی ایک اور ڈیڈ لائن دیدی، دھرنہ ختم نہ کرانے پر وزیرداخلہ کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کردیا۔


تفصیلات کے مطابق اسلام آباد ہائیکورٹ میں فیض آباد دھرنا کیس کی سماعت ہوئی, عدالت کے استفسار پرچیف کمشنرنے بتایا کہ انہیں حکومت نے اقدام اٹھانے سے روکا ہے, جسٹس شوکت صدیقی نے ریمارکس دیئےکہ سمجھ سے بالاتر ہے کہ وفاقی وزیربلکہ وزیراعظم بھی عدالتی حکم کے خلاف کیسے جا سکتے ہیں۔

جسٹس شوکت صدیقی نے استفسار کیا کہ وزیر داخلہ نے کس اتھارٹی کے تحت کارروائی سے روکا؟ کہاکہ چیف کمشنرذوالفقار صاحب اگلے تین دن میں دھرنے کی جگہ خالی کرائیں، عدالت یہ لائسنس نہیں دے سکتی کہ سیدھی سیدھی گولیاں مارنی شروع کردیں، آدھے سے زیادہ لوگ تو آنسو گیس کے شیلز سے ہی بکھرجائیں گے۔

جسٹس صدیقی کا کہنا تھا کہ ختم نبوت صرف چند لوگوں کی نہیں پوری امت کی میراث ہے، ختم نبوت پر شاید مشکل وقت آئے تو مولوی کم عام لوگ زیادہ ہونگے،یہ تاثر ختم کیا جائے کہ دھرنے کے پیچھے ایجنسیوں کا ہاتھ ہے۔