امتحانی پرچہ آوٹ ہونے کا سلسلہ جوں کا توں، زولوجی کا پرچہ مراکز سے باہر


24نیوز:اعلی ثانوی تعلیم بورڈ کے تحت ہونے والے گیارہویں جماعت کا زولوجی کا پرچہ امتحانی مراکز سے باہرآگیا۔

 تفصیلات کے مطابق انٹر کے امتحانات میں نقل اور موبائل فون کا استعمال جاری ہے۔ بورڈ کی جانب سے دفعہ 144 لگائے جانے کے دعوے دھرے کے دھرے رہ گئے۔واضع رہے کہ اس سے قبل  کراچی میں دسویں جماعت کے سائنس گروپ کا 2 بجے شروع ہونے سالانہ اسلامیات کا پرچہ 3 گھنٹے پہلے ہی آؤٹ ہوگیا تھا۔  امتحانی پرچہ آئوٹ ہونا معمول بن گیا۔ امتحانی پرچہ جات اب سوشل میڈیا کی زینت بننے لگے۔ انتظامیہ نقل مافیا کو روکنے میں مکمل طور پر ناکام ہو گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:چیف جسٹس کا حکم نا ماننے پر لاہور کالج فار ویمن یونیورسٹی کی وائس چانسلر عظمیٰ قریشی معطل

 دوسری جانب سکھر میں پرچے آئوٹ ہونا روز کا معمول بن چکا ہے۔ جسے روکنے میں انتظامیہ مکمل طور پر نا کام ہو گئی ہے۔ ادھر گھوٹکی میں دسویں جماعت کا اردو کا پرچہ امتحانی وقت سے قبل ہی امیدواروں تک پہنچ جاتا ہے۔ یہ تو تھی نقل کی کہانی اور اب سنیئے انتظامی نا اہلی گرم موسم اور لوڈ شیڈنگ کا عزاب طلبا و طالبات کے لئےامتحان واقعی امتحان بن گیا۔ کہیں بجلی تھی تو پنکھے نہ تھے۔ لوڈشیڈنگ کا حال دیکھا تو چیئرمین میٹرک بورڈ بھی بول پڑے۔

 میٹرک کے امتحانات سے قبل دعوے اور وعدے تو کیئے گئے تھے۔ نہ نقل کم ہوئی اور نہ ہی لوڈشیڈنگ سے امتحانی مراکز بچ سکے۔