بر طانیہ سے علاج،سابق وزیر اعظم نے عدالت میں درخواست دائر کردی



اسلام آباد(24نیوز)سابق وزیر اعظم نواز شریف نے برطانیہ میں علاج کرانے کی خواہش ظاہر کردی، 15 صفحات پر مشتمل نظر ثانی درخواست سپریم کورٹ میں دائر کرائی گئی۔

درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ عدالت عظمیٰ نے 26 مارچ کو چھ ہفتوں کیلئے مشروط ضمانت دی تھی۔ ضمانت طبی بنیادوں پر دی گئی۔  26 مارچ کے حکم نامے میں کہا گیا کہ نوازشریف چھ ہفتوں کے دوران ملک چھوڑ کر نہیں جاسکتے۔   پاکستان میں علاج کرانے کی پابندی پر نظر ثانی کی جائے۔

نواز شریف کا علاج اسی ڈاکٹر سے ممکن ہے جس نے برطانیہ میں ان کا علاج کیا تھا۔  سپریم کورٹ نےلکھوائے گئے حکم نامے میں کہا کہ نواز شریف ضمانت میں توسیع کے لئے ہائی کورٹ سے رجوع کر سکتے ہیں۔تحریری حکم نامے میں ہائی کورٹ سے رجوع کرنے کاحصہ شامل نہیں ہے۔ یہ ٹائیپنگ کی غلطی ہو سکتی ہے۔سابق وزیر اعظم  نواز شریف کی مکمل صحتیابی چھہ ہفتوں میں ناممکن ہے۔

 پاکستان، برطانیہ، امریکہ اور سوئٹزرلینڈ کے طبی ماہرین کے مطابق نواز شریف کی زندگی کو سنگین خطرات لاحق ہیں، نواز شریف کو دل اور گردوں کے امراض لاحق ہیں، نواز شریف ہائی بلڈ پریشر،شوگر اور گردوں کے تیسرے درجے کی بیماری میں مبتلا ہیں، سپریم کورٹ نے اپنے حکم نامے میں کہا تھا کہ نواز شریف ملک چھوڑ کر نہیں جاسکتے۔  صرف پاکستان کے اندر نواز شریف کو علاج کے لئے پابند کرنے کے فیصلے پر نظر ثانی کی جائے۔ سپریم کورٹ 26 مارچ کے فیصلے پر نظر ثانی کرے۔

اظہر تھراج

Senior Content Writer