سکھر الیکٹرک پاور کمپنی نے دیہاتیوں کی زندگیاں داؤ پر لگادیں

سکھر الیکٹرک پاور کمپنی نے دیہاتیوں کی زندگیاں داؤ پر لگادیں


سکھر (24نیوز) جدید دور میں بھی سکھر الیکٹرک پاور سپلائی کمپنی کے افسران نے دیہاتیوں کی زندگیاں داؤ پر لگاکر گیارہ ہزار پاور کی تاریں کھمبے پر لگانے کا کام سونپ دیا، دیہاتی بغیر سیفٹی کے کھمبے پر چڑھ کر تاریں لگانے میں مصروف ہیں.

بجلی کے کھمبوں پر چڑھ کر تاروں کو ٹھیک کرنا اور بجلی بحال رکھنا تو سیپکو کا کام ہے مگر سیپکو کے عملے نے یہ کام دیہاتیوں سے لیناشروع کردیا ہے، خیرپور کے علاقہ گوٹھ محمد صالح خاصخیلی میں  گزشتہ روز بجلی کی گیارہ ہزار وولٹ کی تاریں ٹوٹ کر گر گئیں اور دیہات کی بجلی منقطع ہوگئی جس کی اطلاع علاقہ مکینوں نے سیپکو حکام کو دی مگر سیپکو کا عملہ وہاں نہیں آیا اور سیپکو کے عملے نے دیہاتیوں سے فون پر رابطہ کرکے انہیں تار جوڑنے کا طریقہ کار بتایا.

فوٹیج میں دیکھا جاسکتا ہے کہ دیہاتی بغیر کسی خوف وخطر کے زمین پر گری ہوئی تاریں جوڑ رہے ہیں اور بغیر حفاظتی انتظامات کے کھمبوں پر چڑھ کر تار لگانے میں مصروف عمل ہیں,علاقہ مکینوں کے مطابق کچھ روز قبل اسی مقام پر بجلی کا کرنٹ لگنے سے محمد خان جان کی بازی ہار گیا تھا.

وقار نیازی

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔