پی ٹی آئی کی حکومت نے خیبر پختو نخوا کو قرضے کے بوجھ تلے دبا دیا


خیبر پختونخوا (24نیوز)  تبدیلی کا نعرے لگانے والے قرض تلے دب گئے،کے پی حکومت پر مجموعی طورپر356ارب روپے کا قرضہ چڑھ گیا،توانائی کے منصوبوں کے لیے 86ارب کا قرض لیاگیا۔

تفصیلات کے مطابق دوسروں کو نصیحت اور خود میاں فصیحت، دوسروں کو قرضے لینے پرتنقید کا نشانہ بنانے والی حکومت نے خود اپنے صوبے کو قرضوں کے کے بوجھ تلے دبا دیا ہے, پاور اور انرجی محکمے کے جاری منصوبوں کے 86 ارب سے زائد کا قرضہ لیا گیا،جس سے صوبے پر مجموعی قرضہ 356 ارب تک پہنچ گیا۔

صوبائی حکومت نے پیہور ہائی لیول کنال کے توسیعی پروگرام کے لیے دو مدوں میں 44 ارب 24 کروڑ سے زائد کا قرضہ لیا،جبکہ چھوٹے پن بجلی گھروں، بنیادی صحت مراکز ،سکولوں کو شمسی توانائی پر منتقل کرنے کے لئے اور بالاکوٹ کے مقام پر 300 میگا واٹ کا ہائیڈل پاور سٹیشنز کی تعمر کے لئے بھی 42 ارب سے زائد کا قرضہ لیا۔

 پاکستان تحریک انصاف کی حکومت کے شروع میں صوبے پر 123ارب81 کروڑ کا قرضہ تھا جبکہ خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ حکومت کے جاتے ہی یہ قرضہ 356 ارب سے تجاوز کر جائےگا, مذکورہ قرضوں کے لئے ہر سال بجٹ میں 22 ارب سے زائد سود کی مد.میں ادائیگی کی جاتی ہے۔